اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ پنجاب حکومت کا بیوروکریسی کے تبادلے نہ کرنے کا فیصلہ کارل سیگن (1934 – 1996) ایک عظیم سائنسدان فالج کے اٹیک سے پوری عمر کی معذوری ہونے سے بچائیں ڈیپارٹمنٹ آف ہارٹیکلچر فیکلٹی آف ایگریکلچر اینڈ انوائر منٹ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور پاکستان سوسائٹی آف ہارٹیکلچر سائنسز کے زیر اہتمام8ویں دو روزہ انٹرنیشنل کانفرنس آل پاکستان انٹرورسٹی ریسلنگ چیمپئن شپ، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور نے 4 کانسی اور1چاندی کامیڈل جیت لیا صدرمملکت کی منظوری کے بغیر ہی قومی اسمبلی کا اجلاس کل صبح 10 بجے طلب، نوٹیفکیشن جاری ملتان ریجن میں بجلی چوروں اور نادہندگان کے خلاف آپریشن جاری نگران وزیراعظم انوارالحق کاکڑ بلوچ لاپتہ افراد کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ پیش ہو گئے یادداشت کوتیز کرنے کیلئےمفید مشقیں وفاقی محتسب بہاولپورریجن میں واپڈا سمیت دیگرمحکموں کیخلاف شکایات پرعوام کو25 لاکھ روپے کاریلیف مل گیا

پاکستان اور ایران کے سفیر دوبارہ اپنی ذمہ داریاں شروع کرنے کو تیار

یوتھ ویژن : ثاقب ابراہیم غوری سے پاکستان اور ایران کے سفیر جمعرات کو اپنے اپنے دارالحکومتوں کو واپس جائیں گے، جب کہ دونوں ہمسایہ ممالک ٹِٹ فار ٹیٹ میزائل حملوں کے نتیجے میں ایک بڑے تنازعے کے دہانے پر پہنچ گئے تھے۔

بدھ کے روز یوتھ ویژن کے نمائندے کو بتایا کہ ایران میں پاکستان کے سفیر مدثر ٹیپو 25 جنوری کو تہران واپس پہنچیں گے، اسی طرح ایرانی سفیر ڈاکٹر رضا امیری موغادم اس ہفتے دوبارہ اپنی ذمہ داریاں سنبھالیں گے۔

پاکستان نے اپنا سفیر واپس بلا لیا اور ایرانی سفیر سے کہا کہ وہ 16 جنوری کو بلوچستان کے پنجگور میں ایران کے میزائل حملوں پر احتجاجاً واپس رہیں۔ ایران نے دعویٰ کیا ہے کہ حملے جیش العدل گروپ کے مبینہ ٹھکانوں پر کیے گئے، جو ایران کے صوبہ سیستان بلوچستان سے سرگرم عسکریت پسند تنظیم ہے۔

نگراں حکومت نے غیر قانونی ترقیوں کی منظوری دے دی

پاکستان، ایران کی جانب سے اپنی فضائی حدود کی خلاف ورزی سے صدمے میں ہے، اس نے اس خلاف ورزی کی مذمت کی اور اپنے اس دعوے کا مقابلہ کیا کہ حملوں میں دہشت گرد مارے گئے۔ اسلام آباد نے کہا کہ ان حملوں میں صرف دو معصوم بچے ہلاک اور تین بچیاں زخمی ہوئیں۔ دو دن بعد، پاکستان نے خود ہی جواب دیا، جس میں اس نے بلوچ دہشت گرد تنظیموں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا۔ ایران نے تسلیم کیا کہ پاکستانی حملوں میں مارے جانے والے اس کے شہری نہیں تھے۔

پاکستان کے جوابی حملوں کے بعد، دونوں فریق تیزی سے بڑھنے کی سیڑھی پر چڑھ گئے۔ دونوں فریقین نے رابطے قائم کیے اور کشیدگی میں کمی پر اتفاق کیا۔ پاکستان اور ایران کے وزرائے خارجہ نے کشیدگی کو کم کرنے کی بھرپور کوششوں کے تحت تین بار ٹیلی فون پر بات کی۔

اس کے بعد دونوں ممالک نے ایک دوسرے کے دارالحکومتوں میں سفیروں کی واپسی کے ساتھ مکمل سفارتی تعلقات بحال کرنے پر اتفاق کیا۔
معمول پر لانے کے عمل کو آگے بڑھانے کے لیے ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہ 29 جنوری کو پاکستان کا دورہ کریں گے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی کم ہو سکتی ہے لیکن فوجی تعطل نے ان کے تعلقات کی بنیاد کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔

ذرائع کے مطابق ایرانی وزیر خارجہ کے دورے کے دوران دونوں فریق مستقبل میں ایسی صورت حال کو دوبارہ ہونے سے روکنے کے طریقوں اور ذرائع پر تبادلہ خیال کریں گے۔

ایک ذریعہ نے کہا کہ پچھلے ہفتے کے ٹائٹ فار ٹیٹ حملوں کی وجہ سے ہونے والی ٹوٹ پھوٹ کو ٹھیک ہونے میں وقت لگے گا۔ دونوں ممالک اکثر اپنے "دوستانہ اور برادرانہ” تعلقات پر فخر کرتے ہیں لیکن اس کے نیچے کچھ مسائل موجود ہیں جو ان کے تعاون کو نقصان پہنچاتے ہیں۔ مسئلہ کا مرکز سرحد کے دونوں طرف بعض عسکریت پسند گروپوں کی موجودگی ہے۔

اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد

حالیہ کشیدگی نے اس مسئلے کو زیادہ واضح طور پر عوام کے سامنے لایا ہے، ذریعہ نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ دونوں فریقین کو مصروفیت کی نئی شرائط پر اتفاق کرنا ہوگا۔ یوتھ ویژن کے ذرائع نے کہا کہ پچھلے ہفتے کی ہچکی کو دیکھتے ہوئے کسی نئے انتظام کے بغیر، مستقبل میں کشیدگی کے پھوٹنے کا امکان باقی رہ سکتا ہے۔

کشیدگی میں کمی کے بعد سے دونوں فریق دہشت گردی کے خطرے سے نمٹنے کے لیے ایک نئے فریم ورک پر اتفاق کرنے کے لیے خاموشی سے کام کر رہے ہیں۔ ایرانی وزیر خارجہ کے دورے کو اتنا ہی اہم دیکھا جا رہا ہے کہ یہ مستقبل کی سمت متعین کرے گا۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com