Your theme is not active, some feature may not work. Buy a valid license from stylothemes.com
روزنامہ یوتھ ویژن کی جانب سے تمام اہل اسلام کو دل کی اتہا گہرائیوں سے عیدالفطر 2024 مبارک ہو اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ بھارت کے ساتھ 5 بلین ڈالر کی تجارت معطل اسحاق ڈار نے وجہ بتا دی ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ صوبے بھر کے سرکاری سکولوں کے لاکھوں بچوں نے اپنے 60,000 نمائندے منتخب کر لیے کرغزستان میں پاکستانی طلباء کو ہجومی تشدد کے واقعات ‘انتہائی تشویشناک’ گھروں کے اندر رہنے کا مشورہ دے دیا عمر ایوب نے بانی پی ٹی آئی کے 7 مقدمات کو مسترد کرتے ہوئے ‘چوری شدہ نشستوں’ کی واپسی پر بات چیت کی ہے ایلون مسک کا بڑا اعلان ٹویٹر X.com بن گیا قومی اسمبلی نے پی ٹی آئی کی زرتاج گل کے خلاف اعتراض پر ن لیگ کے طارق بشیر چیمہ کو موجودہ اجلاس کے لیے معطل کر دیا سپریم کورٹ نے عدلیہ کے خلاف ریمارکس پر فیصل واوڈا اور مصطفیٰ کمال کو شوکاز نوٹس جاری کر دیئے ٹائمز ہائر ایجوکیشن ینگ یونیورسٹی رینکنگ 2024 نے 33 پاکستانی اداروں کو تسلیم کیا ہے جن میں اسلامیہ یونیورسٹی آف بہاولپور بھی شامل ہے، تعلیم اور تحقیق میں ان کی شاندار کارکردگی پر اپنی فہرست جاری کردی نیب قوانین کی سماعت جس میں عمران خان کو شامل کیا گیا ہے، 2 مزیدکیسیزمیں سزا معطل پی ٹی آئی جو تبلیغ کرتی ہے اس پر عمل نہیں کرتی، بلاول بھٹو

جنوبی ایشیا کے تہذیبی اور ثقافتی ورثے کے تحفظ کیلئے کیمبرج یونیورسٹی برطانیہ اور اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے ماہرین مصروف عمل

محمد اسد نعیم پروٹوکول آفیسر

میپنگ آرکیالوجیکل ہیریٹیج اِن ساؤتھ ایشیا (MAHSA) کیمبرج یونیورسٹی برطانیہ کا پروجیکٹ ہے جو دریائے سندھ کے طاس اور آس پاس کے علاقوں کے خطرے سے دوچار آثار قدیمہ اور ثقافتی ورثے کی دستاویز کرے گا اور اس معلومات کو اوپن ایکسیس آرچز جغرافیائی ڈیٹا بیس میں شائع کرے گا۔ یہ ڈیٹا بیس ایک باہمی تعاون پر مبنی آؤٹ پٹ ہو گا جو دریائے سندھ کے طاس اور آس پاس کے علاقوں کے آثار قدیمہ اور خطرے سے دوچار ثقافتی ورثے کے لیے بنیادی نقشہ سازی کے وسائل اور تحقیقی ذخیرہ کے طور پر کام کرے گا۔ یہ مقامی ورثے کے اسٹیک ہولڈرز کے لیے ڈیفالٹ مینجمنٹ ڈیٹا بیس بن کر پائیدار بننے کی خواہش کرے گا۔

اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور اس پراجیکٹ کی آہم پارٹنر ہے ۔ دونوں جامعات کے ماہرین اس پروجیکٹ کے تحت خطہ بہاول پور کے تہذیبی آثار پر تحقیق کر رہے ہیں۔ دو طرفہ تعاون کے لئے باہمی اشتراک عمل جاری رکھے ہوئے ہیں۔اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر نوید اختر کی دعوت پر کیمبرج یونیورسٹی برطانیہ کی ڈاکٹر ربیکا رابرٹس اور عافیہ خان نے بہاولپور کا چار روزہ دورہ کیا۔ پروجیکٹ MAHSA سے وابستہ اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ روابط بڑھانے اور خطے کی عظیم اور تاریخی ثقافت کو جاننے کے مقصد کے ساتھ، انہوں نے جنوبی پنجاب کا سفر کیا۔ اس سلسلے میں ان کے ساتھ شعبہ بشریات ماہر ڈاکٹر معظم خان درانی اور اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے شعبہ تاریخ سے وقار مشتاق بھی تھے، یہ دونوں ماہرین اس پروجیکٹ کے ساتھ جڑے ہوے ہیں۔

کیمبرج یونیورسٹی کے ساتھ تعاون


اس تناظر میں یونیورسٹی نے 2022 میں کیمبرج یونیورسٹی کے ساتھ تعاون کے ایک معاہدے پر دستخط کیے تھے۔ کیمرج ماہرین کا حالیہ دورہ اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے تاکہ دو طرفہ تعاون کو بڑھایا جائے ۔ جنوبی ایشیا کے ثقافتی ورثے کی حفاظت اور ڈیجیٹلائزیشن میں اسٹیک ہولڈرز کو شامل کرنا ان کے دورے کا بنیادی مقصد تھا۔اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے، انہوں نے دورے کا ابتدائی دن، ایس ڈی او سی ڈی اے امتیاز حسین لاشاری اور چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے ایم ڈی سید نعیم بخاری کے لیے وقف کیا۔ ڈاکٹر درانی، ج وقار مشتاق سی ڈی اے، اور مہسا ٹیم سمیت سبھی افراد نے چولستان کے آثار قدیمہ کے تحفظ کے لیے یونیورسٹی آف کیمبرج، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے درمیان ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔


ڈاکٹر درانی نے معزز مہمانوں کو نور محل میوزیم کا دورہ کرایا۔ مہمانوں نے لیزر لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کو خوب سراہا جو بہاولپور کی تاریخ اور ثقافت کا آئینہ دار ہے ۔ نور محل کی انڈس کوئین ریپلیکا کے دورے کے دوران میری ٹائم ٹرانسپورٹیشن سسٹم کی تاریخی اہمیت کا جائزہ لیا گیا۔ ڈیرہ نواب صاحب (صادق گڑھ محل) کے دورے کے دوران شرکاء نے بہاولپور کے معدوم ہوتے شاندار ثقافتی وراثت پر تاسف کا اظہار کیا۔ ولی عہد شہزادہ بہاول عباس عباسی کی غیر موجودگی میں ان کے گھر پر چائے کی پارٹی کا اہتمام کیا گیا جس میں جناب شہزاد سہیل خاکوانی نے شرکت کی۔ اور ریٹائرڈ جج یحییٰ خان کلاچی نے مہمانوں کا استقبال کیا۔ انہوں نے چائے کے بعد نواب کے موٹر گیراج کا دورہ بھی کیا، جس میں قدیم گاڑیاں کھڑی تھیں، چائے پینے کے بعد صادق گڑھ پیلس کی دیدہ زیب آرائش اور وہاں کی سہولیات نے عفیفہ خان کو حیران کر دیا تھا، لیکن وہ قومی ورثے کے تحفظ کے حوالے سے فکر مند تھیں۔ دورے کے بعد، ڈاکٹر درانی نے اپنی بہن کی رہائش گاہ پر دوپہر کے کھانے کا اہتمام کیا جہاں انہوں نے انہیں مقامی کھانوں سے آشنا کرنے کے لیے روایتی کھانا پیش کیا۔ جب انہوں نے وہاں وقت گزارا تو انہیں عصری معاشرے سے متعلق آگاہی فراہم کی گئی۔اگلے روز شعبہ تاریخ اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور نے ایک ورکشاپ کا انعقاد کیا۔ ڈاکٹر ربیکا اور عفیفہ خان نے میراثی ڈیٹا اور آرکائیوز پر پریزنٹیشن دی جبکہ ڈاکٹر سمیعہ خالد نے چولستان کے علاقے میں قلعوں اور قلعوں پر لیکچر دیا۔ وقار مشتاق نے گفتگو کی نظامت کی۔ فیکلٹی آف آرٹس اینڈ لینگویجز کے ڈین ڈاکٹر سید عامر سہیل نے سیشن کا اختتامی خطبہ دیا ۔

سیمینار کے بعد اشفاق سیال ایڈیشنل کمشنر فار کنسولیڈیشن اور بہاولپور کے کمشنر نادر چٹھہ نے کیمبرج اور جامعہ اسلامیہ کی ٹیموں کے ساتھ ایک میٹنگ بلائی۔ ڈاکٹر ربیکا کی طرف سے اس منصوبے کا مکمل جائزہ دیا گیا، اس کے ساتھ ساتھ چولستان میں آثار قدیمہ کی اہمیت، انسانی سرگرمیاں جس طرح سے اسے خطرے میں ڈال رہی ہیں، اور اس کے جاری رہنے کے ممکنہ حل کے بارے میں معلومات فراہم کیں۔ ڈاکٹر درانی اور وقار مشتاق نے MAHSA پروجیکٹ میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے عزم اور ضلعی انتظامیہ کے تعاون کے بارے میں روشنی ڈالی جو اس منصوبے کو اچھی طرح سے چلانے کو یقینی بنانے کے لیے درکار ہے۔ کمشنر بہاولپور نے ہر قدم پر اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کی تدریسی و تحقیقی سرگرمیوں کے فروغ کے لیے تعاون کا یقین دلایا۔ بعد ازاں معزز مہمان ڈائریکٹر چولستان ہیریٹیج ریسرچ میوزیم ڈاکٹر شازیہ انجم اور ڈین فیکلٹی آف آرٹس اینڈ لینگویجز پروفیسر ڈاکٹر سید عامر سہیل کے ہمراہ وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پروفیسر ڈاکٹر نوید اختر سے ملاقات کی۔ ڈاکٹر ربیکا اور عفیفہ خان نے پروفیسر ڈاکٹر نوید اختر وائس چانسلر کو فیلڈ آرکیالوجی کے لیے ڈیجیٹل گیجٹس، پروفیسر ڈاکٹر سید عامر سہیل کو کتابیں اور پروفیسر ڈاکٹر شازیہ انجم کو کیمبرج یونیورسٹی کے ریسرچ جرنل کی ایک کاپی پیش کی۔ ڈائریکٹر چولستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈیزرٹ سٹڈیز ڈاکٹر عبداللہ نے چولستان کی حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کے لیے کی جانے والی ادارہ جاتی کوششوں کا ذکر کیا۔ انہوں نے چولستان کی جنگلی حیات اور پودوں کے بارے میں بھی بات کی اور ساتھ ہی یہ بھی بتایا کہ کس طرح انسانی سرگرمیاں خطے کے پورے ماحولیاتی نظام کے لیے خطرہ ہیں۔ ڈائریکٹر ڈاکٹر شازیہ انجم سے ملاقات میں مہمانوں نے کیمبرج یونیورسٹی کے MAHSA پروجیکٹ کے نیٹ فیز پر تبادلہ خیال کیا جس میں وہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور میں ایک آرکیالوجیکل ڈیجیٹل لیب بنائیں گے۔ لیبارٹری کا سامان اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کو مئی کے وسط تک فراہم کر دیا جائے گا، MAHSA کی ٹیم نے مجوزہ عارضی جگہ کا بھی معائنہ کیا۔


اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے شعبہ بشریات نے ایک سیمینار کابھی اہتمام کیا۔ ڈاکٹر ربیکا اور عفیفہ خان نے مادی ثقافت کے ذریعے معاشرے کے ماضی کی تعمیر کے طریقے کے بارے میں ایک پریزنٹیشن دی اور شعبہ بشریات کے چیئرمین ڈاکٹر فاروق احمد نے مادی ثقافت کی مطابقت اور نوادرات کے تحفظ میں بشریات کے کردار کے بارے میں گفتگو کی۔ اس سیشن کی صدارت فیکلٹی آف کیمیکل اینڈ بائیولوجیکل سائنسز کی ڈین پروفیسر ڈاکٹر شازیہ انجم نے کی اور اختتامی کلمات اور فیکلٹی آف سوشل سائنسز کی ڈین پروفیسر ڈاکٹر روبینہ بھٹی کے تعریفی کلمات کے ساتھ اختتام پذیر ہوا۔ سیشن کے ناظم ڈاکٹر معظم خان دران تھے۔ مزید برآں، پروفیسر ڈاکٹر روبینہ بھٹی نے مقررین، شرکاء اور منتظمین کو ان کی کاوشوں کو سراہتے ہوئے سووینئرز پیش کئے۔سیمینار کے بعد شرکاء نے ڈاکٹر درانی اور وقار مشتاق کے ہمراہ ہڑپہ ساہیوال ریجن میں واقع آثار قدیمہ اور میوزیم کا دورہ کیا۔ اس سفر کا اہتمام جناب فراز شفیق لیکچر، شعبہ پاکستان اسٹڈیز، بہاولنگر کیمپس نے کیا تھا۔ ڈی پی او ساہیوال فیصل شہزاد نے ہڑپہ کے عجائب گھر میں دوپہر کی چائے کا اہتمام کیا۔ مہمانوں کو ہڑپہ میوزیم کے کیوریٹر عمران ٹیپو اور ان کے ساتھیوں نے میوزیم کے نوادرات کے ذخیرے کا جائزہ دیا۔ انہوں نے بتایا کہ جیسے جیسے پراجیکٹ اوپر کی طرف بڑھتا گیا، QGIS اور دیگر ٹیکنالوجی ٹولز کا احاطہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور میں بہت سے آن لائن سیشنز میں کیا گیا جس سے فیکلٹی کی ترقی ممکن ہو سکی۔ دو فیکلٹی ممبران کو آخری مرحلے کے دوران جامع تیاری کے لیے کیمبرج یونیورسٹی میں شرکت کا موقع ملا۔ وہ اگلے مرحلے میں ڈیجیٹلائزیشن کے لیے لیبارٹری بنا رہے ہیں، اور وہ زمینی سیچائی کے لیے فیلڈ سروے کی نگرانی کریں گے۔ جامعہ اسلامیہ بہاولپور اور MAHSA پروجیکٹ کے درمیان تعاون کے شعبوں میں زمین کی تزئین کے فن تعمیر، آثار قدیمہ، جغرافیائی ڈیٹا، آرکائیوز، اور نباتاتی عکاسی کے شعبوں کو آگے بڑھانے پر توجہ دی گئی ہے۔ اسٹیک ہولڈرز کے اجلاس میں شرکت کے لیے ٹیم لاہور روانہ ہو گئی۔ اس دورے اور ملاقاتوں کے بعد امید ہے کہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اس علاقے میں آرکیالوجی کے شعبے میں جدید تحقیق کے فروغ میں کامیاب رہے گی جس سے اس علاقے کی عظیم تہذیبی میراث ڈیجیٹلائزیشن کے ذریعے محفوظ ہو جائے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com