Your theme is not active, some feature may not work. Buy a valid license from stylothemes.com
روزنامہ یوتھ ویژن کی جانب سے تمام اہل اسلام کو دل کی اتہا گہرائیوں سے عیدالفطر 2024 مبارک ہو اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ بھارت کے ساتھ 5 بلین ڈالر کی تجارت معطل اسحاق ڈار نے وجہ بتا دی ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ صوبے بھر کے سرکاری سکولوں کے لاکھوں بچوں نے اپنے 60,000 نمائندے منتخب کر لیے کرغزستان میں پاکستانی طلباء کو ہجومی تشدد کے واقعات ‘انتہائی تشویشناک’ گھروں کے اندر رہنے کا مشورہ دے دیا عمر ایوب نے بانی پی ٹی آئی کے 7 مقدمات کو مسترد کرتے ہوئے ‘چوری شدہ نشستوں’ کی واپسی پر بات چیت کی ہے ایلون مسک کا بڑا اعلان ٹویٹر X.com بن گیا قومی اسمبلی نے پی ٹی آئی کی زرتاج گل کے خلاف اعتراض پر ن لیگ کے طارق بشیر چیمہ کو موجودہ اجلاس کے لیے معطل کر دیا سپریم کورٹ نے عدلیہ کے خلاف ریمارکس پر فیصل واوڈا اور مصطفیٰ کمال کو شوکاز نوٹس جاری کر دیئے ٹائمز ہائر ایجوکیشن ینگ یونیورسٹی رینکنگ 2024 نے 33 پاکستانی اداروں کو تسلیم کیا ہے جن میں اسلامیہ یونیورسٹی آف بہاولپور بھی شامل ہے، تعلیم اور تحقیق میں ان کی شاندار کارکردگی پر اپنی فہرست جاری کردی نیب قوانین کی سماعت جس میں عمران خان کو شامل کیا گیا ہے، 2 مزیدکیسیزمیں سزا معطل پی ٹی آئی جو تبلیغ کرتی ہے اس پر عمل نہیں کرتی، بلاول بھٹو

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی نے 23 مارچ کو کراچی کے دورے کے دوران وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سے ملاقات کی اور پاکستان ایران اقتصادی مواقع بشمول سرمایہ کاری سے متعلق امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی

یوتھ ویژن : ایرانی صدر ابراہیم رئیسی نے منگل کو کراچی کے دورے کے دوران وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سے ملاقات کی اور پاکستان ایران اقتصادی مواقع بشمول سرمایہ کاری سے متعلق امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔

رئیسی اس وقت پاکستان کے تین روزہ دورے پر ہیں اور ایک روز قبل ہی پہنچے تھے۔ ان کا یہ دورہ 8 فروری کے عام انتخابات کے بعد کسی بھی سربراہ مملکت کا اپنی نوعیت کا پہلا دورہ ہے۔

رئیسی اس سے قبل جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے پرانے ٹرمینل پر پہنچے جہاں گورنر سندھ کامران ٹیسوری، وزیراعلیٰ مراد علی شاہ اور صوبائی وزراء نے ان کا استقبال کیا۔

یوتھ ویژن نیوز کے مطابق بعد ازاں انہوں نے مزار قائد پر حاضری دی جہاں انہوں نے پھولوں کی چادر چڑھائی اور صوبائی عہدیداروں اور اپنے وفد کے ساتھ مل کر دعا کی۔

رئیسی کا بعد کا دورہ سندھ وزیر اعلیٰ ہاؤس تھا۔

ایک تقریب منعقد ہوئی جس میں گورنر ٹیسوری کی جانب سے ایرانی صدر کو ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری دی گئی۔

وزیراعلیٰ شاہ کے ترجمان عبدالرشید چنہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ایرانی صدر اور صوبائی چیف نے ملاقات کی جس میں سرمایہ کاری کے امور اور دو طرفہ اقتصادی مواقع پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

اجلاس میں صوبائی وزراء نے بھی شرکت کی۔ سی ایم شاہ نے کہا کہ سندھ حکومت نے ہمیشہ نجی اداروں کی حوصلہ افزائی کی ہے اور صوبے بھر میں مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری کے وسیع مواقع موجود ہیں۔

بعد ازاں ایرانی صدر کے اعزاز میں ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا جنہوں نے اس سے خطاب بھی کیا اور سندھ میں میزبانی پر "خوشی کا اظہار” کیا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ یہ میرے لیے فخر اور اعزاز کی بات ہے کہ آج میں ایک برادر ملک کے صدر، ایک دیرینہ دوست، پاکستان کے ہمدرد اور محسن کا استقبال کر رہا ہوں، انہوں نے مزید کہا کہ پاک ایران تعلقات "صدیوں” پر محیط۔

"ہمارے درمیان مذہبی، علمی، ثقافتی اور اقتصادی تعلقات مضبوط اور وقت کے ساتھ ساتھ گہرے ہوتے جا رہے ہیں۔ پاکستان اور ایران نے دل و جان سے ایک دوسرے کی حمایت کی ہے۔

سی ایم شاہ نے کہا کہ دونوں ممالک "تاریخ کے ایک اہم دور” سے گزر رہے ہیں جہاں بھائی چارہ، اتحاد اور باہمی تعاون "ضروری” تھا۔

ہمیں مختلف مسائل کا سامنا ہے جن میں دہشت گردی، غیر قانونی تجارت، موسمیاتی تبدیلی اور اس کے منفی اثرات، فلسطین اور کشمیر میں بڑھتے ہوئے مظالم سرفہرست ہیں۔

فلسطین اور کشمیر میں مسلمانوں کی نسل کشی تشویشناک ہے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ پاکستان کی نظر میں فلسطین اور کشمیر کے مسائل کا پرامن حل وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مسلمانوں کو اس مشکل وقت میں متحد ہو کر فلسطینیوں کا ساتھ دینا چاہیے۔

شاہ کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کا ’مضبوط اور اصولی موقف‘ ہے کہ غزہ میں فوری جنگ بندی کی جائے اور فلسطینیوں کو ان کے حقوق دیے جائیں جب کہ کشمیریوں کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روشنی میں حل ہونا چاہیے۔

لاہور کا دورہ
اس سے قبل آج رئیسی اور ان کے وفد کا اپنے سرکاری دورے کے دوسرے روز علامہ اقبال انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز نے استقبال کیا۔

پی ٹی وی نیوز کے مطابق پنجاب کے چیف سیکرٹری زاہد اختر زمان، انسپکٹر جنرل پولیس ڈاکٹر عثمان انور اور لاہور میں ایرانی قونصل جنرل مہران مواحدفر ان کا استقبال کرنے والوں میں شامل تھے۔

اس موقع پر سینئر صوبائی وزیر مریم اورنگزیب، سینیٹر پرویز رشید اور صوبائی وزراء عظمیٰ بخاری، مجتبیٰ شجاع الرحمان، خواجہ سلیمان رفیق، بلال یاسین اور چوہدری شافع حسین بھی موجود تھے۔

اس کے بعد ایرانی صدر نے علامہ اقبال کے مزار پر حاضری دی، جہاں انہوں نے پھولوں کی چادر چڑھائی اور فاتحہ خوانی کی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے رئیسی نے کہا کہ وہ "بالکل اجنبی محسوس نہیں کرتے”، انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی عوام کے ساتھ "خصوصی جذبات اور تعلق” تھے جنہوں نے دونوں قوموں کو جوڑے رکھا۔

انہوں نے کہا کہ میں چاہتا تھا کہ عوامی ریلی نکالی جائے تاکہ میں عوام سے خطاب کر سکوں لیکن بعض وجوہات کی بنا پر شرائط ایسی تھیں کہ ایسا ممکن نہ ہو سکا۔

رئیسی نے یہاں کے لوگوں میں موجود "انقلابی جذبے” کو سراہتے ہوئے کہا، "اسلامی جمہوریہ ایران کے سپریم لیڈر کی طرف سے، میں پاکستان اور لاہور کے لوگوں کو اپنا سلام کہتا ہوں۔”

ایرانی صدر نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ علامہ اقبال ایران کے لیے ایک انتہائی اہم شخصیت تھے کیونکہ وہ بہت متاثر کن شخصیت تھے۔ انہوں نے پاکستانی عوام اور حکومت کی بھی تعریف کی کہ "ہمارے ساتھ (ایران) صیہونی طاقتوں کے خلاف سخت موقف اختیار کیا گیا”۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق بادشاہی مسجد کے خطیب مولانا عبدالخبیر آزاد نے پاک ایران تعلقات کے فروغ اور غزہ میں فلسطینیوں کے لیے خصوصی دعا کی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رئیسی نے علامہ اقبال کے ادبی ورثے کے لیے اپنی تعریف وزیٹرز کی کتاب میں لکھی، اس نے مزید کہا کہ انہیں لاہور کے تاریخی مقامات، خاص طور پر پرانی دیواروں والے شہر کے اندر بحالی کی جاری کوششوں کے بارے میں بھی بتایا گیا۔

بعد ازاں رئیسی نے گورنر ہاؤس میں پنجاب کے گورنر بلیغ الرحمان سے ملاقات کی جہاں انہوں نے باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ گورنر رحمان نے صدر اور ان کے وفد کے اعزاز میں ظہرانے کا اہتمام بھی کیا۔

دفتر خارجہ نے کہا کہ بعد ازاں ایرانی صدر نے وزیراعلیٰ مریم سے ملاقات کی جہاں دونوں نے ثقافتی تبادلوں کو بڑھانے اور عوام سے عوام کے روابط کو فروغ دینے کے عزم کا اعادہ کیا۔

وزیراعلیٰ مریم نے صوبے میں سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کی وضاحت کی اور "باہمی فائدے اور خوشحالی” کے لیے ایرانی شہروں اور صوبوں کے ساتھ قریبی روابط کی خواہش کا اظہار کیا۔

رئیسی اگلا کراچی جائیں گے، جہاں وہ وہاں کی صوبائی قیادت سے ملاقات کریں گے۔ ریڈیو پاکستان نے بتایا کہ انہیں کراچی یونیورسٹی کی جانب سے ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری بھی دی جائے گی۔

پنجاب حکومت اور سندھ حکومتوں نے رئیسی سمیت غیر ملکی معززین کے دورے سے قبل "عام لوگوں کو اس کے نتیجے میں ہونے والی تکلیف سے بچنے” کے لیے بالترتیب ضلع لاہور اور کراچی ڈویژن میں آج (منگل) کو مقامی تعطیل کا اعلان کیا ہے۔ سندھ حکومت نے بھی کراچی ڈویژن میں 22 اپریل سے 28 اپریل تک ڈرونز پر مکمل پابندی عائد کردی ہے۔

منگل کے اوائل میں ایکس پر ایک پوسٹ میں، رئیسی نے کہا: "ایران اور پاکستان کے درمیان مشترکات کی وجہ سے، دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو وسعت دینے اور فروغ دینے کی کافی گنجائش ہے۔”

انہوں نے پاکستانی عوام کو مبارکباد پیش کی، جنہوں نے کہا کہ "ہمیشہ اسلام، اسلامی اقدار، مظلوم فلسطینیوں اور انصاف پسندوں کا دفاع کیا”۔

یکم دن اعلیٰ سطحی میٹنگز
ایک روز قبل رئیسی نے اسلام آباد میں ایک مصروف دن گزارا تھا، جہاں دونوں فریقوں نے اگلے پانچ سالوں میں تجارتی حجم کو 10 بلین ڈالر تک بڑھانے کا عزم کیا۔

دارالحکومت پہنچنے کے بعد انہوں نے وزیر اعظم شہباز شریف سے ملاقات کی اور بعد ازاں مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو "اعلیٰ سطح” پر مستحکم کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔

بعد ازاں رئیسی نے صدر آصف علی زرداری سے بھی ملاقات کی جہاں انہوں نے موجودہ تعلقات کو مزید مضبوط بنانے پر اتفاق کیا۔ ایرانی صدر نے چیف آف آرمی سٹاف جنرل عاصم منیر سے ملاقات میں علاقائی استحکام اور سرحدی سلامتی پر تبادلہ خیال کیا۔

وزیر خارجہ اسحاق ڈار نے بھی رئیسی سے ملاقات کی تھی جبکہ وزیر داخلہ محسن نقوی اور ان کے ایرانی ہم منصب ڈاکٹر احمد واحدی نے دونوں ممالک اپنے اپنے ممالک میں دہشت گرد تنظیموں پر پابندی عائد کرنے پر اتفاق کیا۔

اس کے علاوہ پڑوسیوں نے مختلف شعبوں میں تعاون کے لیے آٹھ معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے۔ وزیر اعظم شہباز اور رئیسی نے اسلام آباد کے 11ویں ایونیو کے نئے تعمیر شدہ حصے کا نام بدل کر ایران ایونیو رکھنے کا بھی افتتاح کیا۔

دورے کی اہمیت
رئیسی کا پاکستان کا دورہ اس وقت شکوک و شبہات کا شکار ہو گیا تھا جب اس ماہ کے شروع میں دمشق میں ایرانی قونصلر کی عمارت پر فضائی حملے کے جواب میں ایران کی جانب سے ایک ہفتہ سے بھی زیادہ عرصہ قبل اسرائیل پر میزائل اور ڈرون حملے کے بعد مشرق وسطیٰ میں کشیدگی بڑھ گئی تھی۔ پھر، جمعے کے روز، وسطی ایران کو وہ موصول ہوا جسے اسرائیلی حملہ سمجھا جاتا تھا۔

تہران نے اسرائیل کے بظاہر حملے کو مسترد کر دیا ہے اور اشارہ کیا ہے کہ اس کے پاس جوابی کارروائی کا کوئی منصوبہ نہیں ہے، ایک ایسا ردعمل جس کا اندازہ غزہ میں تنازعہ کو خطے میں پھیلنے سے روکنے کی طرف تھا۔

پاکستان نے مشرق وسطیٰ کے تمام فریقوں پر زور دیا ہے کہ وہ ’’انتہائی تحمل کا مظاہرہ کریں اور کشیدگی میں کمی کی طرف بڑھیں‘‘۔

رئیسی کا دورہ اس لیے بھی اہم ہے کیونکہ پاکستان اور ایران جنوری میں ٹِٹ فار ٹیٹ میزائل حملوں کے بعد تعلقات کو بہتر بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ سرحد پار سے ہونے والے حملوں نے غزہ میں اسرائیل کے فوجی حملے سے پہلے ہی پھیلے ہوئے علاقائی تناؤ کو جنم دیا۔

تہران نے اسی ہفتے پاکستان میں ایران مخالف گروپ کے خلاف حملے کیے جس نے عراق اور شام کو نشانہ بنایا۔ پاکستان نے صوبہ سیستان بلوچستان میں "عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں” پر چھاپے کے ساتھ جواب دیا۔ دونوں ممالک ماضی میں ایک دوسرے پر عسکریت پسندوں کو پناہ دینے کا الزام لگاتے رہے ہیں۔

پاکستان ایک طویل عرصے سے جاری بجلی کے بحران کو حل کرنے کے لیے ایران کے ساتھ گیس کے مشترکہ منصوبے پر بھی اعتماد کر رہا ہے جس نے اس کی اقتصادی ترقی کو روک دیا ہے۔

7.5 بلین ڈالر کی ایران پاکستان گیس پائپ لائن کا افتتاح مارچ 2013 میں بڑے دھوم دھام سے کیا گیا جس کا مقصد پاکستانی پاور پلانٹس کو فراہم کرنا تھا۔ تاہم ایران پر بین الاقوامی پابندیوں کے بعد یہ منصوبہ فوری طور پر رک گیا۔

تہران نے 1,800 کلومیٹر پائپ لائن کا اپنا حصہ بنایا ہے، جو بالآخر اس کے جنوبی پارس گیس فیلڈز کو نواب شاہ سے جوڑ دے گا۔

فروری میں، پاکستان میں سبکدوش ہونے والی نگراں حکومت نے پائپ لائن کے 80 کلومیٹر کے حصے کی تعمیر کی منظوری دی، بنیادی طور پر برسوں کی تاخیر کی وجہ سے ایران کو اربوں ڈالر کے جرمانے کی ادائیگی سے بچنے کے لیے۔

واشنگٹن نے خبردار کیا ہے کہ پاکستان کو امریکی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، یہ کہتے ہوئے کہ وہ پائپ لائن کو آگے بڑھانے کی حمایت نہیں کرتا۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com