اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ دنیا کے لیے بد صورت ترین مگر اپنے وقت کے بہترین کردار ضیاء محی الدین کی پہلی برسی "کپاس کی کاشت میں انقلابی تبدیلی وزیراعظم نے انتخابی نتائج میں تاخیر کے الزامات مسترد کر دیے بلوچستان کے علاقے پشین، قلعہ سیف اللہ میں دو بم دھماکے20 افراد جاں بحق جماعت اسلامی نے انتخابات میں دھاندلی کی صورت میں سخت مزاحمت کا انتباہ دے دیا کیا پی ٹی آئی خیبرپختونخوا کا قلعہ برقرار رکھ سکے گی؟ کراچی میں الیکشن کے انتظامات مکمل پی ٹی آئی کا 5 فروری کو نئے انٹرا پارٹی انتخابات کرانے کا اعلان الیکشن کمیشن نے 8 فروری کو عام تعطیل کا اعلان کر دیا

پاکستان اور ایران کا سفیروں کی واپسی کا اعلان

یوتھ ویژن : ثاقب ابراہیم غوری سے پاکستان اور ایران ایک بڑے تنازعے کے دہانے پر پہنچنے کے چند دن بعد، دونوں ممالک نے پیر کو فیصلہ کیا کہ وہ اس ہفتے کے آخر میں اپنے اپنے دارالحکومتوں میں سفیروں کی واپسی کے ساتھ مکمل سفارتی تعلقات بحال کریں۔

تہران اور اسلام آباد کی طرف سے بیک وقت جاری ہونے والے مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ "پاکستان اور اسلامی جمہوریہ ایران کے وزرائے خارجہ کے درمیان ٹیلی فون پر ہونے والی بات چیت کے بعد، باہمی طور پر اس بات پر اتفاق کیا گیا ہے کہ دونوں ممالک کے سفیر 26 جنوری 2024 تک اپنے اپنے عہدوں پر واپس لوٹ سکتے ہیں-

اس کے علاوہ اہم بات یہ ہے کہ وزیر خارجہ جلیل عباس جیلانی کی دعوت پر اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان 29 جنوری کو پاکستان کا دورہ کریں گے۔

پاکستان کا ایران کو کرارا جواب ، سیستان میں خاص ٹھکانوں پر حملے میں متعدد دہشتگرد ہلاک

دونوں ممالک مستقبل کے لائحہ عمل کا فیصلہ کریں گے اور گزشتہ ہفتے کے واقعات کی تکرار کو روکنے کے لیے ایک نئے طریقہ کار پر کام کریں گے۔

پاکستان اور ایران خاموشی سے ایک نیا میکنزم تیار کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں جس سے گزشتہ ہفتے کے واقعات کی تکرار کو روکا جا سکے جو ان کے دیرینہ تعلقات کو ایک لمحے کے لیے خطرے میں ڈال دیں۔

پاکستان اور ایران اکثر "دوستانہ اور برادرانہ” تعلقات پر فخر کرتے ہیں لیکن اس کے نیچے کچھ ایسے مسائل موجود ہیں جو دونوں دارالحکومتوں میں شکوک و شبہات کا باعث بنتے ہیں۔

مسئلہ کے مرکز میں وہ خدشات ہیں جو دونوں فریقوں کی جانب سے بعض دہشت گرد گروہوں کی جانب سے ایک دوسرے کی سرزمین کے استعمال کے بارے میں اکثر نجی طور پر ظاہر کیے جاتے ہیں۔

پاکستان کو دیرینہ تحفظات ہیں کہ بلوچ دہشت گرد تنظیموں کو سرحد پار ایران کے صوبہ سیستان بلوچستان میں پناہ ملتی ہے۔ دوسری جانب تہران نے جیش العدل جیسے ایران مخالف عسکریت پسند گروپوں پر انگلی اٹھائی جو پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں خفیہ ٹھکانے ہیں۔ ایران نے سرحد پار سے میزائل حملے کرنے کا یہی جواز پیش کیا کہ اس کا مقصد جیش العدل کے ٹھکانوں پر تھا۔

پاکستان نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے حملے کیے اور بموں سے گولہ باری کی جو اس کے بقول بلوچ دہشت گردوں کی پناہ گاہیں ہیں۔ ایران نے اعتراف کیا کہ پاکستانی حملوں میں ہلاک ہونے والے ایرانی نہیں تھے۔

ٹِٹ فار ٹاٹ حملوں کے بعد، پاکستان ایران کے ساتھ ایک نئے انتظام پر کام کرنے کا خواہشمند ہے جو مستقبل میں ایسے واقعات کو روک سکے۔ ایک تجویز دہشت گردی کے خلاف جنگ میں تعاون بڑھانے کے لیے موجودہ میکانزم کو مضبوط بنانا ہے۔ ذرائع کے مطابق، دونوں ممالک ایک دوسرے کی خودمختاری کی خلاف ورزی کرنے کے بجائے انٹیلی جنس تعاون کو مزید گہرا کر سکتے ہیں۔

ان تجاویز پر دونوں ممالک کے درمیان ملاقاتوں کے دوران تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ ایران اور پاکستان کے وزرائے خارجہ نے ٹائٹ فار ٹاٹ حملوں کے بعد سے دو بار بات کی اور اس معاملے سے نمٹنے کے لیے مل کر کام کرنے پر اتفاق کیا۔

پاکستان اپنی طرف سے کشیدگی بڑھانے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتا۔ قومی سلامتی کمیٹی (این ایس سی) نے جمعہ کو اپنے اجلاس میں مفاہمت اور تعاون کا پیغام بھیجنے کے لیے احتیاط سے زبان استعمال کی۔

اعلیٰ اختیاراتی سول ملٹری فورم نے ٹِٹ فار ٹاٹ حملوں کو "معمولی اضطراب” قرار دیا۔

ایران نے بھی پاکستان کے جوابی حملوں کے بعد اپنی بیان بازی کو کم کر دیا۔ تہران نے زور دے کر کہا کہ وہ اسلام آباد کے ساتھ دوستانہ تعلقات کی پالیسی پر کاربند ہے اور کوئی بیرونی دشمن ان کے تعاون کو دبا نہیں سکتا۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com