اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ عارف علوی کا اہم بیان بانی پی ٹی آئی صرف بااختیار لوگوں سے بات چیت چاہتے ہیں بلوچستان واشک میں کوئٹہ جانے والی بس کھائی میں گرنے سے 28 افراد جاں بحق 22 زخمی حکومت نے بجٹ 2024-25 میں امیروں کے لیے ٹیکس معافی واپس لینے کی تجویز پر غور کرنا شروع کردیا طوفانی بارشوں کے بعد کان کے تباہ ہونے سے 12 بھارتی ہلاک ہو گئے نیوکلیئر پاور کے حوالے سے پاکستان کی 26 سالہ یادگاری تقریب۔ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور میں آئندہ بجٹ پر انڈسٹری اور اکیڈمیا ڈائیلاگ پیشانی کو جھوٹی و خطاء کار کیوں کہا گیا؟ بہاولپور میں باپ کے ہاتھوں کمسن بچیاں قتل خانہ کعبہ کا سونے کا دروازہ ۔ رحمت کا پرنالا اور حجر اسود پر چاندی کا خول چڑھانے کے اعزاز بھی بہاولپور کے حصے میں آیا خانہ کعبہ کے دروازے اور حجر اسود کا خول تیار کرنے والی فیکٹری کے پاکستانی مالک خالق حقیقی سے جاملے

قراقرم ہائی وے،سڑک پاکستان کی لیکن دنیا کا8واں عجوبہ

یوتھ ویژن نیوز : قراقرم ہائی وے سڑک پاکستان کی لیکن دنیا کا8واں عجوبہ قرار دیا جاتا ہے

دنیا کا 8واں عجوبہ قراقرم ہائے وئے 1300 کلومیٹر طویل سڑک کے بارے میں جانتے ہونگے یا اپ نے نام سن رکھا ہو گا جو کرہ زمین پر موجود دل فریب اور مشکل ترین پہاڑی چٹانوں کے درمیان سے گزرتی ہے۔

ایک زمانے میں قراقرم ہائی وے شاہراہ ریشم کا حصہ ہوا کہلاتی تھی اس کی بنیاد یہاں کے مقامی لوگوں نے صدیوں پہلے رکھی تھی۔ لیکن 1978 میں، 24 ہزار پاکستانی اور چینی مزدوروں کی 20 سالہ ان تھک محنت کے بعد، اس سڑک پر باقاعدہ طور پر گاڑیوں کی آمدورفت ممکن ہو سکی، اس سڑک کے باعث اس دور دراز علاقے کے لیے اور لوگوں کی زندگی میں تجارت، سیاحت اور سفری آسانی کے دروازے کھل گئے۔

یہ بھی پڑھیں: بہاولپورمیں خاتون نے ایک ساتھ 5 بچوں کی جنم دے دیا

یہ قراقرم سڑک 1300 کلومیٹر طویل سڑک پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے قریب حسن ابدال کے چھوٹے سے شہر سے شروع ہوتی ہے اور 4700 میٹر کی بلندی پر خنجراب کے مقام پر دنیا کی سب سے بلند پکی سڑک سے ہوتی ہوئی چین میں شنکیانگ تک جاتی ہے

اس سڑک کا سب سے دلچسپ حصہ وہ 194 کلومیٹر ہے جو وادی ہنزہ میں موجود ہیں۔ یہ علاقہ قراقرم کے پہاڑوں میں گھرا ہوا ہے جس کی وجہ سے ہی اس سڑک کا نام قراقرم ہائی وے رکھا گیا۔ موسم گرما کے باوجود سات ہزار میٹر بلند چوٹیوں پر برف چمک رہی تھی اور گلیشیئر کے پگھلتے پانی آبشار کی شکل میں ہنرہ وادی سے گزرتے ہوئے دریا میں گرگرتے ہیں شاہراہ قراقرم پر سفر کریں تو تیز ہوا گاڑی کی کھڑکی سے اندر داخل ہوتی ہے

یہ علاقہ غیر یقینی حد تک خوبصورت ہے یہاں سفر کرتے ہوئے شفاف گلیشیئر، جھیلیں اور برف سے اٹی چوٹیاں ہر طرف خوبصورت نظارہ پیش کرتی ہیں۔ سفر تو خوبصورت ہوتا ہے لیکن اس جگہ پر ہائی وے کو خاص بنانے والی ایک اور اہم بات وادی ہنزہ کے لوگ اور اس کی روایات ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: خواتین مردوں سےزیادہ دھوکے بازہوتی ہیں تحقیق نےہنگامہ مچا دیا

گلگت بلتستان میں شنکیانگ اور واخان کاریڈور کے درمیان موجود ہنزہ 20ویں صدی تک باقی دنیا سے کٹا ہوا تھا۔ یہاں کی مقامی آبادی بروشو اور واکھی لوگوں پر مشتمل ہے اور یہاں کی اپنی زبان، موسیقی اور ثقافت ہے جو پاکستان یا دنیا بھر میں کہیں اور نہیں ملیں گے۔

قراقرم ہائی وے نے دنیا کے لیے اس وادی تک کا سفر آسان تو کر دیا ہے لیکن ماحولیاتی اعتبار سے ایک منفی اثر بھی مرتب ہوا اور مقامی لوگوں کی اکثریت کو اپنی روایتی زندگی ترک کرنا پڑی۔ اب یہاں طویل عرصے تک ’جینانی‘ جیسے جشن منانے والے لوگ کم رہ گئے ہیں جو بہار کی آمد کا جشن ہے۔

تاہم اب کچھ مقامی لوگ ہنزہ کی مخصوص روایات کو زندہ رکھنے کے لیے کافی محنت کر رہے ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com