اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ پنجاب حکومت کا بیوروکریسی کے تبادلے نہ کرنے کا فیصلہ کارل سیگن (1934 – 1996) ایک عظیم سائنسدان فالج کے اٹیک سے پوری عمر کی معذوری ہونے سے بچائیں ڈیپارٹمنٹ آف ہارٹیکلچر فیکلٹی آف ایگریکلچر اینڈ انوائر منٹ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور پاکستان سوسائٹی آف ہارٹیکلچر سائنسز کے زیر اہتمام8ویں دو روزہ انٹرنیشنل کانفرنس آل پاکستان انٹرورسٹی ریسلنگ چیمپئن شپ، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور نے 4 کانسی اور1چاندی کامیڈل جیت لیا صدرمملکت کی منظوری کے بغیر ہی قومی اسمبلی کا اجلاس کل صبح 10 بجے طلب، نوٹیفکیشن جاری ملتان ریجن میں بجلی چوروں اور نادہندگان کے خلاف آپریشن جاری نگران وزیراعظم انوارالحق کاکڑ بلوچ لاپتہ افراد کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ پیش ہو گئے یادداشت کوتیز کرنے کیلئےمفید مشقیں وفاقی محتسب بہاولپورریجن میں واپڈا سمیت دیگرمحکموں کیخلاف شکایات پرعوام کو25 لاکھ روپے کاریلیف مل گیا

سپریم کورٹ نے ایف آئی اے کو صحافیوں کو جاری نوٹس واپس لینے کا حکم دے دیا

یوتھ ویژن : (واصب ابراہیم غوری سے) سپریم کورٹ نے پیر کے روز وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کو ہدایت کی کہ وہ سوشل میڈیا پر عدلیہ اور اداروں کے خلاف "بد نیتی پر مبنی مہم” کے معاملے میں صحافیوں کو جاری کیے گئے نوٹس فوری طور پر واپس لے۔

ایف آئی اے کی جانب سے صحافیوں کو ہراساں کرنے کے خلاف ازخود نوٹس کی سماعت چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے کی۔

چیف جسٹس عیسیٰ نے اٹارنی جنرل آف پاکستان منصور اعوان سے کہا کہ زبانی گالی گلوچ الگ معاملہ ہے، وفاقی ایجنسی کو محض تنقید پر میڈیا والوں کے خلاف کارروائی نہیں کرنی چاہیے۔ اے جی پی نے جواب میں چیف جسٹس کو یقین دلایا کہ صحافیوں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی جائے گی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ وہ تنقید کو کم کرنے کے سخت خلاف ہیں کیونکہ آزادی صحافت آئین میں درج ہے۔ مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ آپ میرا مذاق اڑائیں گے لیکن اگر آپ عدلیہ کا مذاق اڑائیں گے تو ملک کو نقصان ہوگا۔ آپ سپریم کورٹ پر تنقید کر سکتے ہیں، لیکن آئین کی بھی کچھ حدود ہیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ اگر آپ سمجھتے ہیں کہ آپ تنقید بند کر کے مجھے یا سپریم کورٹ کو فائدہ پہنچا رہے ہیں تو آپ [ادارے کو] نقصان پہنچا رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ صحافیوں کو عدالتی فیصلوں پر تنقید کرنے کی اجازت ہے لیکن اکسانے کا معاملہ مختلف ہے۔ ’’ہم کسی عام آدمی یا صحافی کو تنقید کرنے سے کبھی نہیں روک سکتے‘‘۔

جسٹس مسرت ہلالی نے ریمارکس دیئے کہ منصفانہ تنقید کوئی مسئلہ نہیں لیکن جو زبان استعمال کی گئی وہ غلط ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ نازیبا زبان استعمال کرنا غلط ہے لیکن تنقید منع نہیں، صرف تنقید کرنے پر صحافی کو گرفتار کرنا غلط ہے۔

"مجھے پرواہ نہیں ہے، لیکن حد ہونا چاہئے. ہم ان کو بھی حقوق دیں گے جو یہاں موجود نہیں ہیں۔ میں خود پر تنقید کا خیرمقدم کرتا ہوں۔” انہوں نے کہا۔

صحافی مطیع اللہ جان نے بینچ سے کہا کہ ارشد شریف کے قتل سے متعلق ازخود سماعت کی تاریخ مقرر کی جائے، چیف جسٹس نے جواب دیا کہ آئندہ سماعت پر سماعت ہوگی۔

چیف جسٹس نے یہ بھی ریمارکس دیئے کہ نفرت انگیز تقاریر کے ساتھ کچھ اور واقعات بھی صرف پاکستان میں ہوتے ہیں جن میں پولیو ورکرز کے قتل اور لڑکیوں کے سکولوں پر حملے نمایاں ہوتے ہیں۔

"حکومت انتہا پسندانہ سوچ کے خلاف کچھ کیوں نہیں کرتی؟ خواتین کو ووٹ ڈالنے اور پولیو کے قطرے پلانے سے روکنے والے کیوں نہیں پکڑے جاتے؟ دیکھیں جڑانوالہ میں کیا ہوا، سب کچھ نفرت کا نتیجہ ہے، یہ لوگ استعمال ہو چکے ہیں اور اب یہ ازگر بن چکے ہیں، خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کا فتویٰ دینے والے کو گرفتار کیوں نہیں کیا؟ چیف جسٹس نے کہا۔

جسٹس محمد علی مظہر نے کہا کہ اگر میڈیا ضابطہ اخلاق بنانا چاہتا ہے تو بتائیں کس کی مدد کی ضرورت ہے؟

جسٹس ہلالی نے ریمارکس دیے کہ ‘غلط استعمال کے ذریعے پیسہ کمانا لوگوں کے لیے روزی روٹی کا ذریعہ بن گیا ہے، یہ انتہائی افسوسناک ہے’۔

چیف جسٹس نے اس کے بعد اے جی پی سے صحافی اسد طور کے کیس کی صورتحال کے بارے میں دریافت کیا اور بتایا گیا کہ مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ جسٹس عیسیٰ نے پھر طور سے پوچھا کہ کیا وہ ملزم کو پہچان سکتے ہیں؟

اگر ملزمان سامنے آتے ہیں تو میں انہیں پہچان سکتا ہوں۔ ملزم میرے اپارٹمنٹ میں موبائل فون استعمال کرتا رہا لیکن جیوفینسنگ نہیں کی گئی۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ملزمان کے خاکے اور فنگر پرنٹس انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے ساتھ کیوں شیئر نہیں کیے گئے۔ کیا اسد طور کا کیس بھی ایکٹو ہے یا اسے مردہ خانے منتقل کر دیا گیا ہے؟

جسٹس عیسیٰ نے کہا کہ طور کو بنیادی حقوق فراہم کیے جائیں، چاہے کیس آگے بڑھے یا نہیں۔

’مجھ پر کوئی دباؤ نہیں، جب 2021 میں درخواست دائر کی گئی تو میں سمجھ گیا کہ مطیع اللہ جان بھی میرے ساتھ ہیں، جس طریقہ کار سے کمرہ عدالت میں درخواست دی گئی وہ درست نہیں‘۔ چیف جسٹس نے درخواست وصول کرنے کے انداز پر بھی برہمی کا اظہار کیا۔

ان ریمارکس کے بعد عدالت نے کیس کی سماعت منگل تک ملتوی کر دی۔

ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ نے 30 اور 31 جنوری کو ججز اور اداروں کے خلاف مبینہ طور پر "بد نیتی پر مبنی مہم” چلانے کے الزام میں مختلف صحافیوں اور سوشل میڈیا ایکٹیوسٹس سمیت 65 افراد کو ہفتے کے روز طلب کیا تھا۔

پی ٹی آئی کے انٹرا پارٹی انتخابات کے خلاف سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد، جس نے اس کا مشہور انتخابی نشان – کرکٹ بیٹ چھین لیا، سوشل میڈیا پر مبینہ طور پر ججوں اور اداروں کے خلاف ایک بدنیتی پر مبنی مہم شروع کی گئی۔

جن صحافیوں اور سوشل میڈیا کارکنوں کو نوٹس جاری کیے گئے ہیں ان میں صحافی سیرل المیڈا، شاہین صہبائی، عدیل محمود راجہ، سید ثمر عباس، اسد علی طور، مطیع اللہ جان، محمد صدیق جان اور محمد صابر شاکر شامل ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com