Your theme is not active, some feature may not work. Buy a valid license from stylothemes.com
روزنامہ یوتھ ویژن کی جانب سے تمام اہل اسلام کو دل کی اتہا گہرائیوں سے عیدالفطر 2024 مبارک ہو اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ بھارت کے ساتھ 5 بلین ڈالر کی تجارت معطل اسحاق ڈار نے وجہ بتا دی ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ صوبے بھر کے سرکاری سکولوں کے لاکھوں بچوں نے اپنے 60,000 نمائندے منتخب کر لیے کرغزستان میں پاکستانی طلباء کو ہجومی تشدد کے واقعات ‘انتہائی تشویشناک’ گھروں کے اندر رہنے کا مشورہ دے دیا عمر ایوب نے بانی پی ٹی آئی کے 7 مقدمات کو مسترد کرتے ہوئے ‘چوری شدہ نشستوں’ کی واپسی پر بات چیت کی ہے ایلون مسک کا بڑا اعلان ٹویٹر X.com بن گیا قومی اسمبلی نے پی ٹی آئی کی زرتاج گل کے خلاف اعتراض پر ن لیگ کے طارق بشیر چیمہ کو موجودہ اجلاس کے لیے معطل کر دیا سپریم کورٹ نے عدلیہ کے خلاف ریمارکس پر فیصل واوڈا اور مصطفیٰ کمال کو شوکاز نوٹس جاری کر دیئے ٹائمز ہائر ایجوکیشن ینگ یونیورسٹی رینکنگ 2024 نے 33 پاکستانی اداروں کو تسلیم کیا ہے جن میں اسلامیہ یونیورسٹی آف بہاولپور بھی شامل ہے، تعلیم اور تحقیق میں ان کی شاندار کارکردگی پر اپنی فہرست جاری کردی نیب قوانین کی سماعت جس میں عمران خان کو شامل کیا گیا ہے، 2 مزیدکیسیزمیں سزا معطل پی ٹی آئی جو تبلیغ کرتی ہے اس پر عمل نہیں کرتی، بلاول بھٹو

مہنگائی کی شرح میں کمی 2 سال کی کم ترین سطح پر پہنچ گی

مہنگائی کی شرح میں کمی 2 سال کی کم ترین سطح پر پہنچ گی

یوتھ ویژن : شہزاد حُسین بھٹی سےمہنگائی کی شرح میں کمی2 سال کی کم ترین سطح پر پہنچ گی

یوتھ ویژن کے ذرائع کے مطابق موسمی اضافے خراب ہونے ں کے باوجود اشیائے خوردونوش میں افراط زر مارچ میں تقریباً 2 سال کی کم ترین سطح 20.7 فیصد پر آگئی، حکومت کی توقعات کو بڑے مارجن سے مات دینے اور ریکارڈ بلند شرح سود کو برقرار رکھنے کے لیے مرکزی بینک کی پالیسی پر سوالیہ نشان لگا دیا۔

پاکستان بیورو آف سٹیٹسٹکس (پی بی ایس) نے پیر کو اطلاع دی ہے کہ سامان اور خدمات کی قیمتوں میں اضافے کی رفتار گزشتہ سال کے اسی مہینے کے مقابلے مارچ میں 20.7 فیصد رہی۔ یہ گزشتہ 22 مہینوں میں سب سے کم شرح تھی۔
یہ لگاتار دوسرا مہینہ تھا جب مہنگائی کی رفتار نمایاں طور پر کم ہوئی – یہاں تک کہ پرامید سرکاری تخمینوں سے کہیں زیادہ۔ یہ مسلسل تیسرا مہینہ بھی تھا جب اضافے کی رفتار نیچے کی طرف رہی۔

گزشتہ ہفتے، وزارت خزانہ نے پیش گوئی کی تھی کہ افراط زر تقریباً 23.5 فیصد تک رہے گا۔ سست روی شہری مراکز میں زیادہ واضح تھی، جہاں قیمتوں میں اضافے کی رفتار نمایاں طور پر کم ہوگئی۔

مرکزی بینک نے پالیسی ریٹ کو 22% پر برقرار رکھا ہے، جو کہ 1972 کے بعد سے بلند ترین شرح ہے اور ناقابل جواز ہے کیونکہ پاکستان میں مہنگائی زیادہ تر انتظامی قیمتوں میں اضافے یا خوراک کی فراہمی کے جھٹکے سے ہوتی ہے۔

شرح سود بنیادی افراط زر کی شرح سے زیادہ ہے، جس نے رواں مالی سال کے لیے حکومتی قرض لینے کی لاگت میں 8.3 ٹریلین روپے کا نمایاں اضافہ کیا ہے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) نے گزشتہ مانیٹری پالیسی کمیٹی (ایم پی سی) کے اجلاس میں شرح سود میں کمی نہیں کی تھی باوجود اس کے کہ گراوٹ کا رحجان ظاہر کیا گیا تھا اور بنیادی افراط زر بھی آرام سے تھا۔

ایسا لگتا ہے کہ اسٹیٹ بینک بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سے ڈکٹیشن لے رہا ہے اور شرح سود میں کمی نہیں کر رہا، جس سے کاروبار اور سرکاری خزانے پر خاصا اثر پڑا ہے۔ رواں مالی سال کی دوسری سہ ماہی میں معیشت کی شرح نمو صرف 1 فیصد رہی، جب کہ صنعتی شعبے میں 0.9 فیصد کمی ہوئی۔

آئی ایم ایف کی یقین دہانی

مرکزی بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر کو مستحکم کرنے کے لیے انٹربینک سے ڈالر خریدنے کے فیصلے کی وجہ سے روپے اور ڈالر کی برابری بھی 278 روپے کے لگ بھگ رہی۔

پی بی ایس افراط زر کے بلیٹن سے ظاہر ہوتا ہے کہ خوراک اور توانائی کی اشیاء دونوں کے لیے رفتار میں نرمی آ رہی ہے، جس سے دیہی اور شہری دونوں علاقوں میں مزید نرمی ہوئی ہے۔ شہری علاقوں میں غیر خوراکی افراط زر کی شرح 25.8 فیصد اور دیہی علاقوں میں 21 فیصد تک گر گئی۔

بجلی، گیس، پیٹرول، ڈیزل اور ٹرانسپورٹ چارجز نے غیر غذائی مہنگائی کی شرح کو دوہرے ہندسے میں رکھا۔ گیس کے نرخ پچھلے سال کے مقابلے میں 318 فیصد زیادہ تھے اور بجلی کی قیمت گزشتہ سال کے مقابلے میں تقریباً تین چوتھائی زیادہ تھی۔

پاکستان نے بجلی کی قیمتوں میں بروقت اضافے کے لیے آئی ایم ایف سے بھی وعدہ کیا ہے۔ گزشتہ ہفتے نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی نے سیلز ٹیکس سمیت صارفین سے اضافی 100 ارب روپے کی وصولی کے لیے بجلی کی قیمتوں میں 2 روپے 76 پیسے فی یونٹ اضافہ کیا۔

شہروں اور دیہی علاقوں میں اشیائے خوردونوش کی مہنگائی میں کمی آئی۔ پی بی ایس کے مطابق، شہری مراکز میں اس کی رفتار کم ہو کر 16.6 فیصد اور دیہاتوں اور قصبوں میں 17 فیصد سے قدرے اوپر آ گئی۔ ضروری اور پائیدار اشیاء کی قیمتوں میں مسلسل دوہرے ہندسے میں اضافے کی وجہ سے لوگوں کی قوت خرید میں نمایاں کمی آئی ہے۔

یکے بعد دیگرے آنے والی حکومتوں نے ٹیکس کے بوجھ میں نمایاں اضافہ کیا ہے۔ ایک روز قبل حکومت نے بین الاقوامی منڈیوں میں قیمتوں میں اضافے کے باعث پیٹرول کی قیمت میں مزید 10 روپے فی لیٹر اضافہ کردیا تھا۔

زر مبادلہ کی شرح مستحکم رہی ہے اور توقع کی جاتی ہے کہ زیادہ بنیادی اثرات کی وجہ سے آنے والے مہینوں میں افراط زر کی شرح مزید کم ہو سکتی ہے۔ اس کے باوجود، حکومت 21 فیصد کے سالانہ اوسط مہنگائی کے ہدف سے محروم رہے گی۔

بنیادی افراط زر، جس کا شمار توانائی اور غذائی اشیاء کو چھوڑ کر کیا جاتا ہے، شہری علاقوں میں کم ہو کر 12.8 فیصد ہو گیا، جو تقریباً دو سالوں میں سب سے سست رفتار ہے۔ دیہی علاقوں میں یہ 20 فیصد ریکارڈ کی گئی۔ اوسط بنیادی افراط زر اب پالیسی کی شرح سے نمایاں طور پر کم ہے۔

اسٹیٹ بینک کے سابق گورنر ڈاکٹر رضا باقر نے آئی ایم ایف سے اتفاق کیا تھا کہ پاکستان شرح سود کو بنیادی اشاریے سے منقطع کرکے عام افراط زر کی شرح کے مطابق مقرر کرے گا۔ الکوحل والے مشروبات اور تمباکو کو چھوڑ کر تمام 12 گروپوں کی اشیاء کی قیمتوں میں اب بھی دوہرے ہندسے کا اضافہ تھا۔

ناکارہ اشیا کی قیمتوں میں 14 فیصد اضافہ ہوا لیکن یہ تناسب خراب ہونے والی اشیا کے لیے 42 فیصد سے زیادہ تھا۔ رمضان المبارک میں طلب میں اضافے کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہوئے دکانداروں نے پھلوں اور سبزیوں کی قیمتوں میں اضافہ کردیا۔

ٹماٹر، پیاز، آلو، تازہ پھل، سبزیاں، چینی، گندم کے آٹے اور پلاس کی قیمتوں میں خاطر خواہ اضافہ ہوا۔ لیکن گزشتہ ماہ کوکنگ آئل کی قیمتوں میں ایک 22 فیصد کمی ہوئی۔

حکومت اور مرکزی بینک ایک بار پھر اپنے سالانہ افراط زر کے 21 فیصد کے ہدف سے محروم ہو گئے ہیں۔ پی بی ایس نے رپورٹ کیا کہ رواں مالی سال کے جولائی تا مارچ کی مدت کے لیے اوسط مہنگائی 27.1 فیصد رہی۔ یہ رواں مالی سال کے 21 فیصد کے سرکاری ہدف سے کہیں زیادہ ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com