Your theme is not active, some feature may not work. Buy a valid license from stylothemes.com
روزنامہ یوتھ ویژن کی جانب سے تمام اہل اسلام کو دل کی اتہا گہرائیوں سے عیدالفطر 2024 مبارک ہو اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ بھارت کے ساتھ 5 بلین ڈالر کی تجارت معطل اسحاق ڈار نے وجہ بتا دی ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ صوبے بھر کے سرکاری سکولوں کے لاکھوں بچوں نے اپنے 60,000 نمائندے منتخب کر لیے کرغزستان میں پاکستانی طلباء کو ہجومی تشدد کے واقعات ‘انتہائی تشویشناک’ گھروں کے اندر رہنے کا مشورہ دے دیا عمر ایوب نے بانی پی ٹی آئی کے 7 مقدمات کو مسترد کرتے ہوئے ‘چوری شدہ نشستوں’ کی واپسی پر بات چیت کی ہے ایلون مسک کا بڑا اعلان ٹویٹر X.com بن گیا قومی اسمبلی نے پی ٹی آئی کی زرتاج گل کے خلاف اعتراض پر ن لیگ کے طارق بشیر چیمہ کو موجودہ اجلاس کے لیے معطل کر دیا سپریم کورٹ نے عدلیہ کے خلاف ریمارکس پر فیصل واوڈا اور مصطفیٰ کمال کو شوکاز نوٹس جاری کر دیئے ٹائمز ہائر ایجوکیشن ینگ یونیورسٹی رینکنگ 2024 نے 33 پاکستانی اداروں کو تسلیم کیا ہے جن میں اسلامیہ یونیورسٹی آف بہاولپور بھی شامل ہے، تعلیم اور تحقیق میں ان کی شاندار کارکردگی پر اپنی فہرست جاری کردی نیب قوانین کی سماعت جس میں عمران خان کو شامل کیا گیا ہے، 2 مزیدکیسیزمیں سزا معطل پی ٹی آئی جو تبلیغ کرتی ہے اس پر عمل نہیں کرتی، بلاول بھٹو

ایمنسٹی انٹرنیشنل نے پاکستان میں ‘ X ‘ کی فوری بحالی کے لیے اہم اقدام

یوتھ ویژن : ایمنسٹی انٹرنیشنل نے انسانی حقوق کے کارکنوں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کے اتحاد کے ساتھ ملک میں 17 فروری سے بلاک کر دیے گئے سوشل میڈیا پلیٹ فارم X (سابقہ ​​ٹویٹر) کو فوری طور پر بحال کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

یوتھ ویژن نیوز کے مطابق راولپنڈی ڈویژن میں مبینہ "انتخابی دھاندلی” کے الزام میں راولپنڈی کے سابق کمشنر لیاقت چٹھہ کے مستعفی ہونے کے بعد سے X ناقابل رسائی ہے۔X پلیٹ فارم پر پابندی انتخابات کے دن یعنی 8 فروری کو موبائل فون سروسز کی بندش کے بعد لگائی گئی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ "17 فروری 2024 سے "X” (سابقہ ​​ٹویٹر کے نام سے جانا جاتا تھا) کی طویل اور غیر اعلانیہ رکاوٹ سمیت پلیٹ فارمز کی من مانی طور پر بلاکنگ، ملک میں بڑھتی ہوئی ڈیجیٹل سنسرشپ کی ایک سنجیدہ مثال ہے۔

بین الاقوامی غیر سرکاری انسانی حقوق کی تنظیم کے بیان میں انٹرنیٹ کی بندش اور سوشل میڈیا پلیٹ فارم کو سیاسی گفتگو اور معلومات کے آزادانہ بہاؤ، خاص طور پر اہم انتخابی عمل کو آگے بڑھانے اور اس کی پیروی کرنے پر روکنے کے نقصان دہ اثرات پر روشنی ڈالی گئی۔

"اس طرح کے اقدامات نہ صرف مختلف سیاسی آوازوں کو خاموش کر دیتے ہیں بلکہ ایک ایسا ماحول بھی پیدا کرتے ہیں جو غلط معلومات کو پھیلانے میں معاون ثابت ہوتا ہے۔”

یوتھ ویژن نیوز کے مطابق ایمنسٹی انٹرنیشنل کا یہ بیان ملک میں آزادی اظہار اور معلومات تک رسائی کے خاتمے پر بڑھتے ہوئے خدشات کے درمیان آیا ہے۔ انسانی حقوق کی تنظیم نے "پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (PTA) کی مکمل خاموشی” پر بھی تنقید کی اور اسے انتہائی تشویشناک قرار دیا کیونکہ اتھارٹی پابندی کی کوئی وجہ پیش کرنے میں ناکام رہی اور "ایک پورے انٹرنیٹ پلیٹ فارم کو بلاک کرنے کے اپنے مینڈیٹ سے تجاوز کیا”۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ "نیٹ ورک کے بند ہونے اور پلیٹ فارم کو بلاک کرنے اور کسی بھی جوابدہی کو مکمل طور پر نظر انداز کرنے سے متعلق فیصلہ سازی کے عمل میں شفافیت کی عدم موجودگی کے نتیجے میں ریاست اور اس کے شہریوں کے درمیان اعتماد کا واضح خاتمہ ہوا ہے۔”

خدشات کی وضاحت کرتے ہوئے، تنظیم نے کہا کہ ورچوئل پرائیویٹ نیٹ ورکس (VPNs) کی مبینہ طور پر تھروٹلنگ لوگوں کی معلومات تک رسائی کو مزید روکتی ہے اور ان کے رازداری کے حق کی خلاف ورزی کرتی ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل اور اس کے شراکت داروں نے پاکستان میں ڈیجیٹل سنسرشپ کو واپس لینے کے لیے فوری کارروائی کا مطالبہ کیا۔

خاص طور پر، ایمنسٹی انٹرنیشنل نے حکومت پر زور دیا کہ وہ X کو غیر مسدود کرے، سنسرشپ کو فعال کرنے والے قوانین جیسے کہ الیکٹرانک کرائم ایکٹ (PECA) کی روک تھام کے سیکشن 37 کو منسوخ کرے، اور سیاسی اور اقتصادی مقاصد کے لیے انٹرنیٹ کے استعمال کو متاثر کرنے والے فیصلوں پر شفاف طریقے سے عمل کرے۔

مزید برآں، انسانی حقوق کی تنظیم اور بیان کے دیگر دستخط کنندگان نے پلیٹ فارم کی حالیہ رکاوٹوں کی قانونی بنیادوں اور آزادی اظہار اور معلومات تک رسائی کے لیے پاکستان کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کو برقرار رکھنے کے عزم کی وضاحت کا مطالبہ کیا۔

آنے والی حکومت، ریگولیٹرز، اور عوامی اداروں سے درخواست کی گئی کہ وہ ایسے اقدامات کے پائیدار اثرات کو تسلیم کریں جو معلومات کے بہاؤ کو محدود کرتے ہیں اور شہریوں کی اپنے اظہار کی صلاحیت کو روکتے ہیں، خاص طور پر سیاسی شرکت سے متعلق۔

پاکستان ہفتے کے روز سوشل میڈیا پلیٹ فارم X پر ملک گیر رکاوٹ کے اپنے چوتھے ہفتے میں داخل ہوا، کارکنوں نے اسے بحال کرنے کے لیے عدالتی جنگ لڑی۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com