اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ پنجاب حکومت کا بیوروکریسی کے تبادلے نہ کرنے کا فیصلہ کارل سیگن (1934 – 1996) ایک عظیم سائنسدان فالج کے اٹیک سے پوری عمر کی معذوری ہونے سے بچائیں ڈیپارٹمنٹ آف ہارٹیکلچر فیکلٹی آف ایگریکلچر اینڈ انوائر منٹ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور پاکستان سوسائٹی آف ہارٹیکلچر سائنسز کے زیر اہتمام8ویں دو روزہ انٹرنیشنل کانفرنس آل پاکستان انٹرورسٹی ریسلنگ چیمپئن شپ، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور نے 4 کانسی اور1چاندی کامیڈل جیت لیا صدرمملکت کی منظوری کے بغیر ہی قومی اسمبلی کا اجلاس کل صبح 10 بجے طلب، نوٹیفکیشن جاری ملتان ریجن میں بجلی چوروں اور نادہندگان کے خلاف آپریشن جاری نگران وزیراعظم انوارالحق کاکڑ بلوچ لاپتہ افراد کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ پیش ہو گئے یادداشت کوتیز کرنے کیلئےمفید مشقیں وفاقی محتسب بہاولپورریجن میں واپڈا سمیت دیگرمحکموں کیخلاف شکایات پرعوام کو25 لاکھ روپے کاریلیف مل گیا

وزیراعظم نے انتخابی نتائج میں تاخیر کے الزامات مسترد کر دیے

یوتھ ویژن : ثاقب ابراہیم غوری سے نگراں وزیر اعظم انوارالحق کاکڑ نے پیر کے روز اس بات کی تصدیق کی کہ نگران حکومت نے حال ہی میں ختم ہونے والے انتخابات میں تمام سیاسی جماعتوں کے لیے برابری کا میدان فراہم کیا تھا، جنہیں ‘آزادانہ اور منصفانہ’ تصور کیا گیا تھا۔

انہوں نے روشنی ڈالی کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں کی ایک قابل ذکر تعداد قومی اور صوبائی اسمبلیوں میں سب سے بڑا واحد گروپ بن کر ابھری۔

وزیراعظم ہاؤس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ کوتاہیاں یا دیگر چھوٹے موٹے مسائل ہوسکتے ہیں لیکن مجموعی طور پر انتخابات اس انداز میں ہوئے جس میں مختلف سیکیورٹی کے باوجود پوری قوم اور قانون نافذ کرنے والے ادارے خراج تحسین کے مستحق ہیں۔ چیلنجز

انہوں نے تسلیم کیا کہ ہوسکتا ہے کہ کچھ کوتاہیاں یا معمولی مسائل رہے ہوں لیکن مجموعی طور پر مختلف سیکیورٹی چیلنجز کا سامنا کرنے کے باوجود انتخابات پوری قوم اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے لیے تعریف کے مستحق تھے۔

وزیراعظم نے زور دے کر کہا کہ سوشل میڈیا کے ذریعے دھاندلی کے الزامات لگائے گئے جو غلط فہمیوں پر مبنی اور زمینی حقائق کے برعکس ہیں اور کہا کہ ملک کی جمہوری تاریخ میں عوام نے ہمیشہ انتخابی عمل پر سوال اٹھایا ہے۔

انہوں نے ریمارکس دیئے کہ جہاں پی ٹی آئی کو عوامی حمایت حاصل ہے وہیں اسے حاصل ہوا اور انہوں نے 2018 میں کبھی خواب میں بھی نہیں دیکھا تھا۔ انہوں نے نوٹ کیا کہ پی ٹی آئی کے قیدی رہنماؤں کے وفادار عام انتخابات میں امیدواروں کے طور پر کامیاب ہوئے، پھر بھی اس پہلو کو تسلیم کرنے میں نگران حکومت کی غیرجانبداری ناقابل تعریف ہے۔

انہوں نے روشنی ڈالی کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں کی ایک قابل ذکر تعداد قومی اور صوبائی اسمبلیوں میں سب سے بڑا واحد گروپ بن کر ابھری۔

وزیراعظم ہاؤس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ کوتاہیاں یا دیگر چھوٹے موٹے مسائل ہوسکتے ہیں لیکن مجموعی طور پر انتخابات اس انداز میں ہوئے جس میں مختلف سیکیورٹی کے باوجود پوری قوم اور قانون نافذ کرنے والے ادارے خراج تحسین کے مستحق ہیں۔ چیلنجز

انہوں نے تسلیم کیا کہ ہوسکتا ہے کہ کچھ کوتاہیاں یا معمولی مسائل رہے ہوں لیکن مجموعی طور پر مختلف سیکیورٹی چیلنجز کا سامنا کرنے کے باوجود انتخابات پوری قوم اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے لیے تعریف کے مستحق تھے۔

وزیراعظم نے زور دے کر کہا کہ سوشل میڈیا کے ذریعے دھاندلی کے الزامات لگائے گئے جو غلط فہمیوں پر مبنی اور زمینی حقائق کے برعکس ہیں اور کہا کہ ملک کی جمہوری تاریخ میں عوام نے ہمیشہ انتخابی عمل پر سوال اٹھایا ہے۔

انہوں نے ریمارکس دیئے کہ جہاں پی ٹی آئی کو عوامی حمایت حاصل ہے وہیں اسے حاصل ہوا اور انہوں نے 2018 میں کبھی خواب میں بھی نہیں دیکھا تھا۔ انہوں نے نوٹ کیا کہ پی ٹی آئی کے قیدی رہنماؤں کے وفادار عام انتخابات میں امیدواروں کے طور پر کامیاب ہوئے، پھر بھی اس پہلو کو تسلیم کرنے میں نگران حکومت کی غیرجانبداری ناقابل تعریف ہے۔

"ہمیں رویوں کو بدل کر محاذ آرائی کے اس شیطانی دائرے سے چھٹکارا حاصل کرنا چاہیے۔ سیاسی اختلافات سے معاشرے میں دراڑیں نہیں پڑنی چاہئیں۔”

انہوں نے نیشنل ڈیموکریٹک موومنٹ (این ڈی ایم) کے سربراہ محسن داوڑ کی جلد صحت یابی کی بھی خواہش کی اور کہا کہ احتجاج اور ایجی ٹیشن کو کبھی بھی انتشار اور انتشار کی طرف نہیں جانا چاہیے۔

ایک سوال کے جواب میں، انہوں نے برقرار رکھا کہ 60 ملین سے زیادہ ووٹرز نے "دباؤ سے پاک ماحول” میں اپنے پسندیدہ امیدواروں کو منتخب کرنے کے لیے اپنا آئینی حق استعمال کیا۔

نگراں وزیراعظم نے کہا کہ سرکاری نتائج کے اعلان میں تاخیر 92 ہزار پولنگ سٹیشنوں پر نتائج مرتب کرنے کے مخصوص طریقہ کار کی وجہ سے ہوئی اور بڑے پیمانے پر مشق کو بخوبی انجام دینے کا سہرا الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو دیا۔

انہوں نے نوٹ کیا کہ سرکاری نتائج کا اعلان 36 گھنٹے کے اندر کیا گیا، جو کہ 2018 کے انتخابات کے دوران لگ بھگ 66 گھنٹے کے مقابلے میں ایک قابل ذکر بہتری ہے۔

بے ضابطگیوں کے امکان کو تسلیم کرتے ہوئے، انہوں نے نشاندہی کی کہ کسی بھی شکایات کو دور کرنے کے لیے مناسب فورمز موجود ہیں۔ انہوں نے بین الاقوامی موازنہ پر بھی روشنی ڈالی، اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ سویڈن میں، اسی طرح کے عمل میں تقریباً 10 سے 11 دن لگے، اور انڈونیشیا میں، نتائج کو حتمی شکل دینے میں تقریباً ایک مہینہ لگا۔

ایک اور سوال کے جواب میں، وزیر اعظم نے روشنی ڈالی کہ الیکشن کے دن موبائل فون سروس سیکیورٹی خطرات کی وجہ سے معطل کی گئی تھی، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ حکومت عوام کے تحفظ پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرسکتی۔ تاہم، انہوں نے واضح کیا کہ براڈ بینڈ انٹرنیٹ خدمات کام کر رہی ہیں، جس سے لوگ جڑے رہ سکتے ہیں۔ انہوں نے ان الزامات کو مسترد کر دیا جس میں کہا گیا تھا کہ اس اقدام کا مقصد سوشل میڈیا کو کنٹرول کرنا تھا۔

انہوں نے کہا کہ سال بھر میں ایسے اور مواقع بھی آئے جب سیکیورٹی خطرات کو ٹالنے کے لیے موبائل سروس معطل کردی گئی۔

وزیر اعظم کاکڑ نے حال ہی میں ہونے والے انتخابات کے حوالے سے مغربی ممالک کے بیانات کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ اگر کوئی الزامات ہیں تو وہ کسی ملک کے مطالبے پر نہیں بلکہ ملکی قوانین کے مطابق دیکھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ اگر ملک کے قوانین کے تحت ضرورت پڑی تو ہم یہ کریں گے، انہوں نے مزید کہا کہ ان کے ہم وطنوں کے مطالبات حکومت کے لیے زیادہ اہم ہیں اور انہوں نے مشورہ دیا کہ امریکی کانگریس کے بیانات کو "مقدس” یا خوشخبری کی سچائی کے طور پر نہ لیا جائے۔ حکومت کی طرف سے نہیں بول رہے تھے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ پاکستان میں انتخابات آزادانہ اور منصفانہ انداز میں منعقد ہوئے اور کسی گروپ کی حمایت کا کوئی ادارہ جاتی طریقہ کار نہیں تھا۔

انتخابات سے متعلق الزامات کی تحقیقات کے لیے کمیشن کی تشکیل کے امکانات کے بارے میں سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ یہ آنے والی منتخب حکومت پر منحصر ہے کہ وہ ایسے مطالبات کا جائزہ لے کر فیصلہ کرے، لیکن وہ اس معاملے پر کوئی قیاس آرائی نہیں کریں گے۔

سیکیورٹی خطرات کے بارے میں انہوں نے کہا کہ انتخابات کی تاریخ سے قبل ملک میں دہشت گردانہ حملوں کی مصدقہ اطلاعات تھیں جنہیں پبلک ڈومین میں ظاہر نہیں کیا جا سکتا۔ قلعہ سیف اللہ میں کارروائی کے دوران کالعدم داعش کے ایک رہنما کو بے اثر کر دیا گیا جو بلوچستان میں دہشت گرد حملوں میں ملوث تھا۔

نگران وزیراعظم نے الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں (ای وی ایم) کو متعارف کرانے کی ضرورت سے متعلق صدر کے خیالات سے بھی اتفاق کیا۔ انہوں نے کہا کہ ان کے ذاتی عقیدے کے مطابق سیاسی جماعتوں کو اس معاملے پر آئندہ پارلیمنٹ میں جامع بات چیت کرنی چاہیے اور ضرورت پڑنے پر قانون سازی کرنی چاہیے تاکہ نیا انتخابی نظام سب کے لیے زیادہ قابل قبول ہو۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ ایک بار جب موجودہ عبوری دور ختم ہو جائے گا اور نئی حکومت قائم ہو جائے گی تو مارکیٹوں اور کاروباروں پر ایک مثبت لہر آئے گی، خبردار کیا کہ معاشی چیلنجز اب بھی اگلی حکومت کا انتظار کریں گے۔

وزیراعظم نے نئے ووٹرز کے داخلے کو بھی سراہا اور کہا کہ وہ مستقبل میں جمہوری عمل میں مثبت کردار ادا کریں گے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کو نگراں حکومت کی جانب سے نجکاری کے عمل پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی آئی اے کی تنظیم نو تکمیل کے قریب ہے اور عمل درآمد کے مرحلے میں ہے، تاہم یہ آئندہ حکومت کی صوابدید پر چھوڑ دیا جائے گا کہ وہ اپنا لائحہ عمل طے کرے۔

نئی حکومت کے قیام کے حوالے سے وزیراعظم نے کہا کہ وہ حکومت کی باگ ڈور عوام کے منتخب نمائندوں کو سونپنے کے لیے بے چین ہیں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ قومی اسمبلی کے سپیکر مطلوبہ عمل شروع کریں گے اور ان کا خیال ہے کہ سیاسی جماعتوں کے درمیان ہونے والے مذاکرات کے نتائج کے مطابق اس مشق میں آٹھ سے نو دن لگ سکتے ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com