اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ پنجاب حکومت کا بیوروکریسی کے تبادلے نہ کرنے کا فیصلہ کارل سیگن (1934 – 1996) ایک عظیم سائنسدان فالج کے اٹیک سے پوری عمر کی معذوری ہونے سے بچائیں ڈیپارٹمنٹ آف ہارٹیکلچر فیکلٹی آف ایگریکلچر اینڈ انوائر منٹ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور پاکستان سوسائٹی آف ہارٹیکلچر سائنسز کے زیر اہتمام8ویں دو روزہ انٹرنیشنل کانفرنس آل پاکستان انٹرورسٹی ریسلنگ چیمپئن شپ، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور نے 4 کانسی اور1چاندی کامیڈل جیت لیا صدرمملکت کی منظوری کے بغیر ہی قومی اسمبلی کا اجلاس کل صبح 10 بجے طلب، نوٹیفکیشن جاری ملتان ریجن میں بجلی چوروں اور نادہندگان کے خلاف آپریشن جاری نگران وزیراعظم انوارالحق کاکڑ بلوچ لاپتہ افراد کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ پیش ہو گئے یادداشت کوتیز کرنے کیلئےمفید مشقیں وفاقی محتسب بہاولپورریجن میں واپڈا سمیت دیگرمحکموں کیخلاف شکایات پرعوام کو25 لاکھ روپے کاریلیف مل گیا

سیاسی پارٹی کے منشور محض کاغذ پر الفاظ؟

یوتھ ویژن : ثاقب ابراہیم غوری سے ہر عام انتخابات سے پہلے، سیاسی جماعتیں ایک منشور کے ساتھ سامنے آتی ہیں، ایک دستاویز جس کا مقصد عوام کو پارٹیوں کے مقاصد اور پالیسیوں سے آگاہ کرنا ہوتا ہے، جب وہ اقتدار میں ہوتی ہیں۔ تاہم، ایک بار اقتدار میں آنے کے بعد، منشور میں طے شدہ مقاصد محض کاغذ پر الفاظ بن کر رہ جاتے ہیں۔

چاہے وہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) ہو، جس نے 2008 میں مرکز میں حکومت بنائی، پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) جس نے 2013 میں وفاقی حکومت بنائی، یا پاکستان تحریک انصاف، جس نے 2018 میں اقتدار میں آیا، تینوں نے منتخب ہونے سے پہلے اپنے اپنے منشور کے ذریعے مختلف وعدے کیے؛ اور تینوں ان وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام رہے۔

پنجاب یونیورسٹی کے شعبہ سیاسیات کی چیئرمین ڈاکٹر ارم خالد کے بقول، جیسا بھی ہو، منشور اب بھی کسی پارٹی کی حکومت کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لیے کارآمد ہوتے ہیں اور دیکھیں کہ کیا وہ بات کو آگے بڑھا سکتی ہے۔ ڈاکٹر خالد نے کہا، "بدقسمتی سے پاکستان میں جذبات اور شخصیات کی سیاست سب سے زیادہ راج کرتی ہے، اس لیے منشور زیادہ اہمیت نہیں رکھتے،” ڈاکٹر خالد نے رائے دی۔

انتخابی منشورمعیشت کے بارے میں مسلم لیگ (ن) کی محتاط امید

چونکہ سیاسی جماعتوں کو احساس ہوتا ہے کہ شخصیات کی سیاست بکتی ہے، اس لیے وہ جذباتی نعروں یا جلسوں میں کیچڑ اچھالنے یا سوشل میڈیا کے ذریعے اپنے ووٹ بینک کو متحرک یا متحرک کرتی ہیں، جیسا کہ دیر تک، شعبہ سیاسیات کے چیئرمین نے وضاحت کی۔

ملک میں منشور کی اہمیت کا اندازہ اس وقت لگایا جا سکتا ہے جب وہ جاری ہوتے ہیں۔ ترقی یافتہ جمہوری ممالک میں، توجہ حاصل کرنے کے لیے منشور مہینوں پہلے جاری کیے جاتے ہیں۔ جبکہ پاکستان میں منشور انتخابات سے چند ہفتے قبل سامنے آتے ہیں۔

کراچی کی رہائشی شہناز اختر کے لیے ڈاکٹر خالد کے مشاہدات حقیقت سے دور نہیں ہیں۔ پی پی پی کا منشور ہمیشہ روٹی، کپڑا، مکاں رہا ہے لیکن جب تک وہ اس بنیادی منشور کو عملی جامہ پہنانے کے لیے حکمت عملی کا اعلان نہیں کرتے، یہ محض کاغذی باتیں ہیں، یا خالی وعدے ہیں۔ اختر نے جو کہ ایک گھریلو خاتون ہیں، مزید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ حال ہی میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے ملک کو ان گنت بحرانوں سے نکالنے کے لیے 10 نکاتی ایجنڈا پیش کیا لیکن اس پر عمل درآمد کے لیے مالی وسائل کہاں سے ہیں، اس حوالے سے کوئی لائحہ عمل نہیں دیا۔ ایجنڈا سے آئے گا.

اختر کی تنقید میں اضافہ کرتے ہوئے سندھ کی سیاست پر گہری نظر رکھنے والے سیاسی تجزیہ کار نصیر میمن نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے سندھ میں کافی عرصے تک حکومت کرنے کے باوجود صوبے کی زراعت اور دیہی معیار زندگی میں کوئی خاص ترقی نہیں ہوئی۔ جو پارٹی کے منشور کے خلاف تھا۔

مرکزی دھارے کی تین پارٹیوں میں سے دونوں دیگر عوامی منشور کے وعدوں کی نظر میں کچھ بہتر نہیں کر سکتیں۔ مثال کے طور پر، ایک سرکاری سکول کے ریٹائرڈ پرنسپل محمد اسلم کے پاس مسلم لیگ ن کے ساتھ انتخاب کی ہڈی تھی۔ اسلم نے کہا، "مسلم لیگ ن نے 2013 سے 2018 تک اور 2022 کے بعد اقتدار میں آنے کے دوران، انفراسٹرکچر اور توانائی کے شعبوں میں سرمایہ کاری کا وعدہ کیا لیکن اپنی توجہ صرف پنجاب پر مرکوز رکھی،” اسلم نے کہا۔

اب مسلم لیگ (ن) دوبارہ اقتدار کے لیے کوشاں ہے لیکن اس نے مہنگائی اور بے روزگاری سے نمٹنے کے لیے کوئی منصوبہ نہیں دیا۔ پارٹی اپنے کسی بھی وعدے کو کیسے پورا کرے گی؟ طویل عرصے سے ماہر تعلیم نے سوال کیا۔

جامعہ کراچی کے شعبہ سیاسیات کی پروفیسر ڈاکٹر ثمر سلطانہ کو اسلم کے سوال میں حکمت نظر آتی ہے۔ "عوام معاشی بدحالی سے پس چکے ہیں اور اگر مسلم لیگ (ن) اقتدار میں رہنا چاہتی ہے تو اسے ایک روڈ میپ دینے کی ضرورت ہے کہ وہ معیشت کا رخ کیسے کرے گی۔ ہم نے پہلے ہی پارٹی کو مرکز میں اقتدار میں آتے دیکھا ہے اور اپنے منشور کو نافذ نہیں کیا، "پروفیسر نے کہا۔

اسی طرح ایک دکاندار عمیر فاروقی نے ایکسپریس ٹریبیون سے بات کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے ٹوٹے ہوئے وعدوں پر تشویش کا اظہار کیا۔ پی ٹی آئی کی زیر قیادت وفاقی حکومت نے اپنے وعدے کے برعکس ملک کے مسائل کے حل کے لیے کوئی خاطر خواہ اقدامات نہیں کیے ۔ پارٹی کے دور میں ملک کو معاشی طور پر نقصان پہنچا، "انہوں نے زور دے کر کہا۔

فاروقی کا اندازہ پرویز خٹک، سابق وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ (K-P) سے ملتا ہے، جنہوں نے حال ہی میں پی ٹی آئی چھوڑ کر اپنی سیاسی جماعت بنائی تھی۔ پی ٹی آئی کے منشور میں کرپشن کے خاتمے اور لاکھوں گھروں کا وعدہ کیا گیا تھا لیکن خٹک کے مطابق پارٹی ان وعدوں میں سے کسی ایک کو بھی پورا نہیں کر سکی۔ "یونیورسل ہیلتھ کیئر کے آئیڈیا کو بھی صحیح طریقے سے لاگو نہیں کیا جا سکا اور پی ٹی آئی کے اقتدار میں رہنے کے دوران صحت کی دیکھ بھال کے نظام کی مجموعی حالت خراب ہو گئی،” خٹک نے اپنی سابقہ ​​پارٹی کی شاندار سرزنش کرتے ہوئے کہا۔

خٹک کے پی ٹی آئی کے خلاف تحفظات کے باوجود، یہ ظاہر ہے کہ صرف پی ٹی آئی ہی نہیں جو منشور کے وعدے پورے کرنے میں ناکام رہی ہے۔ اس حوالے سے سیاسی تجزیہ کار میمن نے مشاہدہ کیا کہ سیاسی جماعتیں منشور کو سنجیدگی سے نہیں لیتیں کیونکہ انتخابات کے بعد منشور میں کیے گئے وعدوں پر کوئی عمل درآمد نہیں ہوتا۔

تاہم، تینوں مرکزی دھارے کی جماعتوں کے رہنما ان پر کی جانے والی تنقید سے متفق نہیں ہیں۔ پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما سینیٹر تاج حیدر نے ایکسپریس ٹریبیون سے بات چیت میں دعویٰ کیا کہ اقتدار سنبھالنے کے بعد ان کی جماعت نے عام انتخابات میں اعلان کردہ منشور سے زیادہ سہولیات کی پیشکش کی، خاص طور پر صحت کے شعبے اور سستی تعمیرات کے حوالے سے۔ ہاؤسنگ سینیٹر نے روشنی ڈالی، "گزشتہ 5 سالوں کے دوران سندھ کے اسپتالوں میں دوسرے صوبوں سے 0.3 ملین سے زائد مریضوں کا علاج کیا گیا اور صوبے کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں 320,000 گھروں کی تعمیر بھی مکمل کی جا چکی ہے۔”

جب اس بات کی نشاندہی کی گئی کہ سستی رہائش کے وعدے کے مطابق متاثرہ علاقوں میں 20 لاکھ گھر تباہ ہو چکے ہیں اور 18 ماہ گزرنے کے بعد بھی بہت سے لوگ بے گھر ہیں، حیدر نے کہا کہ تکنیکی مسائل کی وجہ سے یہ منصوبہ تاخیر سے شروع ہوا۔

دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے جنرل سیکریٹری احسن اقبال سے جب ان کی پارٹی کے ٹوٹے ہوئے وعدوں کے بارے میں سوال کیا گیا تو انہوں نے سخت الفاظ میں کہا کہ ’مسلم لیگ (ن) ملک کی واحد جماعت ہے جو اپنے منشور کے مطابق عوام کی خدمت کرتی ہے‘۔ اپنے اس دعوے کو مزید آگے بڑھاتے ہوئے اقبال نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ آئندہ انتخابات کے لیے پارٹی کا منشور قانونی نظام میں اصلاحات، معیشت کی بہتری، غربت میں کمی، بدعنوانی کا خاتمہ، آئی ٹی اور صحت کے شعبوں میں بہتری اور احتساب کے نظام کو درست کرنا ہے۔

تاہم، اقبال نے اس بارے میں کوئی ٹائم لائن نہیں دی کہ یہ وعدے کب پورے ہوں گے، اگر ان کی پارٹی فروری میں اقتدار میں آتی ہے۔

پی ٹی آئی کے سینئر رہنما، سابق صوبائی وزیر تیمور جھگڑا نے بھی اسی انداز میں اپنی پارٹی کے منشور کا دفاع کیا۔ جھگڑا نے کہا کہ اگر پی ٹی آئی اپنے منشور کے مطابق کام نہ کرتی تو ملک کے عوام خصوصاً کے پی کے عوام پارٹی کے ساتھ کھڑے نہ ہوتے جیسے آج ہے۔ جبکہ سابق صوبائی وزیر نے اعتراف کیا کہ کوئی بھی 100 فیصد ڈیلیور نہیں کر سکتا، انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے صحت کی دیکھ بھال، تعلیم، کھیل اور سیاحت میں انقلاب برپا کیا، یہ سب پارٹی کے منشور کے مطابق ہے۔ جب پولیس اصلاحات، چھوٹے اور بڑے ڈیموں اور بدعنوانی کے خاتمے جیسے منشور کے ٹوٹے ہوئے وعدوں کے بارے میں سوال کیا گیا تو جھگڑا نے کہا: "بدقسمتی سے، گزشتہ سال جب نگران حکومت آئی تو پی ٹی آئی کے بہت سے گڈ گورننس اقدامات الٹ گئے۔”

سیاسی جماعتوں کے اپنی کارکردگی، ماضی کے وعدے پورے کرنے اور نئی یقین دہانیوں کے دعوؤں کے برعکس پنجاب یونیورسٹی کے شعبہ سیاسیات کے چیئرمین ڈاکٹر خالد کا موقف تھا کہ مسلم لیگ ن، پی پی پی اور پی ٹی آئی منشور کے ان وعدوں پر عمل نہیں کیا جن کا انہوں نے ماضی میں اعلان کیا تھا۔ "اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ مرکزی دھارے کی تینوں پارٹیاں دراصل عوام کی پرواہ نہیں کرتیں، ان کی واحد ترجیح اقتدار میں رہنا ہے،” انہوں نے ڈیلی یوتھ ویژن نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com