اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ عارف علوی کا اہم بیان بانی پی ٹی آئی صرف بااختیار لوگوں سے بات چیت چاہتے ہیں بلوچستان واشک میں کوئٹہ جانے والی بس کھائی میں گرنے سے 28 افراد جاں بحق 22 زخمی حکومت نے بجٹ 2024-25 میں امیروں کے لیے ٹیکس معافی واپس لینے کی تجویز پر غور کرنا شروع کردیا طوفانی بارشوں کے بعد کان کے تباہ ہونے سے 12 بھارتی ہلاک ہو گئے نیوکلیئر پاور کے حوالے سے پاکستان کی 26 سالہ یادگاری تقریب۔ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور میں آئندہ بجٹ پر انڈسٹری اور اکیڈمیا ڈائیلاگ پیشانی کو جھوٹی و خطاء کار کیوں کہا گیا؟ بہاولپور میں باپ کے ہاتھوں کمسن بچیاں قتل خانہ کعبہ کا سونے کا دروازہ ۔ رحمت کا پرنالا اور حجر اسود پر چاندی کا خول چڑھانے کے اعزاز بھی بہاولپور کے حصے میں آیا خانہ کعبہ کے دروازے اور حجر اسود کا خول تیار کرنے والی فیکٹری کے پاکستانی مالک خالق حقیقی سے جاملے

وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی کوآرڈینیشن پاکستان میں کیمیکل اور خطرناک فضلہ کےانتظام سے متعلق آگاہی اورتربیتی ورکشاپ کا انعقاد

یوتھ ویژن نیوز : موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کی وزارت نے، اقوام متحدہ کے ماحولیاتی پروگرام (UNEP) کے تعاون سے، کیمیائی اور مضر فضلہ کے انتظام کے بارے میں ایک انتہائی کامیاب آگاہی اور تربیتی ورکشاپ کا انعقاد کیا۔ لاہور کے ایک مقامی ہوٹل میں منعقد ہونے والی یہ ورکشاپ NEPU کے فنڈڈ پراجیکٹ "پاکستان میں کیمیکلز اور مضر فضلہ کے صوتی انتظام کے لیے اسٹیک ہولڈرز کی قومی قانون سازی اور صلاحیتوں کی تعمیر کے لیے خصوصی پروگرام” کے تحت منعقد کی گئی۔

یہ بھی پڑھیں: اسلامیہ یونیورسٹی بھاولپور کےنوجوان طالب علم علی رضا کا اعزاز گھر کی چھت کو قابل استعمال بنا دیا


ورکشاپ کا مقصد پاکستان میں کیمیکل اور خطرناک فضلہ کے انتظام سے متعلق اہم مسائل کے بارے میں آگاہی اور فہم کو بڑھانا اور شرکاء کو ان چیلنجوں سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے ضروری معلومات اور مہارتوں سے آراستہ کرنا تھا۔
لاہور ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر جناب بابر صاحب دین نے پاکستان بھر سے معزز مہمانوں اور ماہرین کو ورکشاپ میں خوش آمدید کہا۔ مسٹر دین نے اہم اسٹیک ہولڈرز اور ریسورس پرسنز کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے ورکشاپ کی کامیابی کو یقینی بنانے کے لیے اپنے علم اور تجربات کو وقف کیا۔ خطرناک فضلہ کے انتظام کے لیے بین الاقوامی کوششوں کی طرف توجہ مبذول کراتے ہوئے، مسٹر دین نے باسل، روٹرڈیم، اسٹاک ہوم اور میناماتا جیسے کنونشنوں کے لیے پاکستان کے عزم کا ذکر کیا۔ انہوں نے اس چیلنج سے نمٹنے کے لیے فکری اور تکنیکی وسائل کو یکجا کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کیمیکلز اور خطرناک فضلہ کے پیدا کرنے والے اور درآمد کنندہ کے طور پر پاکستان کے کردار پر زور دیا۔
ڈاکٹر ضیغم عباس، ڈپٹی ڈائریکٹر (کیمیکل) وزارت موسمیاتی تبدیلیاور ماحولیاتی کوآرڈینیشنپاکستان میں خطرناک فضلہ اور کیمیائی مسئلے پر روشنی ڈالتے ہوئے روشن خیال تعارفی کلمات پیش کئے۔ انہوں نے کیمیکل اور فضلہ سے متعلق کثیرالطرفہ ماحولیاتی معاہدوں جیسے باسل، اسٹاک ہوم، روٹرڈیم، میناماٹا اور ویانا کنونشنز اور مونٹریال پروٹوکول کی ذمہ داریوں اور تعمیل کے حوالے سے حکومت کے وعدوں کا اشتراک کیا۔ انہوں نے قومی قانون سازی کو مضبوط بنانے اور اسٹیک ہولڈرز کی مضبوط کیمیکل اور مضر کچرے کے انتظام کے طریقوں کے لیے NEPU کے فنڈڈ خصوصی پروگرام کی اہمیت کو بھی اجاگر کیا۔

یہ بھی پڑھیں: نگران پنجاب حکومت نے31 اسسٹنٹ کمشنرزتبدیل کر دیے، نوٹیفیکیشن


پروفیسر ڈاکٹر معین الدین غوری نے ماحول اور انسانی صحت پر مضر فضلہ اور کیمیکلز کے مضر اثرات پر اپنی پریزنٹیشن سے حاضرین کو مسحور کردیا۔ انہوں نے کچرے کو غلط طریقے سے ٹھکانے لگانے کے سنگین نتائج پر روشنی ڈالی اور اپنے ماحول اور فلاح و بہبود کے لیے ذمہ دارانہ فضلہ کے انتظام کے طریقوں کو اپنانے کی فوری ضرورت پر زور دیا۔
پروفیسر ڈاکٹر فرحت یاسمین نے خطرناک فضلہ کے تعارف، خصوصیات، اقسام اور ذرائع سے متعلق سیشن میں اپنی مہارت کا اظہار کیا۔ اس کی معلوماتی پریزنٹیشن نے شرکاء کو خطرناک فضلہ کے بارے میں ایک جامع فہم فراہم کیا، جس سے وہ ایسے مواد کی شناخت، درجہ بندی اور مؤثر طریقے سے نمٹنے کے قابل ہوئے۔
جناب ساجد رضا، وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کے پروگرام ٹیکنیکل آفیسر، نے کیمیکلز اور مضر فضلہ کے انتظام میں مختلف اسٹیک ہولڈرز کے کردار کے بارے میں ایک پرکشش پریزنٹیشن پیش کی۔ انہوں نے حکومتی اداروں، صنعت کے پیشہ ور افراد، سول سوسائٹی کی تنظیموں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے درمیان تعاون کی ضرورت پر زور دیا تاکہ پوری ویلیو چین میں فضلہ کے موثر انتظام کے طریقوں کو یقینی بنایا جا سکے۔

یہ بھی پڑھیں: ڈالر،پٹرول، گیس اور بجلی کی قیمت بڑھنے کے بعد گھی اور کوکنگ آئل کی قیمت میں اضافہ کا امکان
نیشنل کنسلٹنٹ محترمہ بشریٰ افضل نے مضر فضلہ اور کیمیکل مینجمنٹ کے لیے قومی ضابطوں، رہنما اصولوں اور پالیسیوں کے بارے میں ایک جامع پریزنٹیشن پیش کی۔ اس کے سیشن نے شرکا کو ملک میں فضلہ کے انتظام کے قانونی فریم ورک کے بارے میں گہری سمجھ بوجھ فراہم کی، جس میں ضوابط کی پابندی کی اہمیت اور پالیسی کے نفاذ کی اہمیت پر زور دیا۔
ورکشاپ میں ساجد رضا کی طرف سے خطرناک کچرے اور کیمیکلز کے انتظام کے حوالے سے ایک پریزنٹیشن بھی پیش کی گئی۔ اس کے سیشن نے پیداوار سے لے کر ضائع کرنے تک، خطرناک مواد کی پوری زندگی کے دوران پائیدار طریقوں کو اپنانے کی اہمیت پر زور دیا۔
شرکاء، بشمول سرکاری افسران، صنعت کے نمائندے، اکیڈمی، اور سول سوسائٹی کی تنظیموں نے، ورکشاپ کے سیشنز میں سرگرمی سے حصہ لیا اور زیر بحث مسائل کے تئیں اعلیٰ سطح کی حساسیت کا اظہار کیا۔ ورکشاپ کے دوران فراہم کردہ معلومات اور نیٹ ورکنگ کے مواقع سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ پاکستان میں کیمیائی اور مضر فضلہ کے انتظام کے طریقوں کو بہتر بنانے میں اہم کردار ادا کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں: خواتین مردوں سےزیادہ دھوکے بازہوتی ہیں تحقیق نےہنگامہ مچا دیا
ورکشاپ کا اختتام کامران احمد، جوائنٹ سیکرٹری، انٹرنیشنل کوآپریشن ونگ، وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی کوآرڈینیشن کے کلمات کے ساتھ ہوا۔ انہوں نے پورے ایونٹ میں فعال شرکت اور بصیرت انگیز بات چیت کے لیے اپنی تعریف کا اظہار کیا، ماحولیاتی معاہدوں کی اہمیت پر زور دیا اور بیسل کنونشن کی تعمیل میں پاکستان میں موثر ویسٹ مینجمنٹ کے طریقوں کو فروغ دینے کے لیے کیمیکل اور مضر فضلہ سے متعلق جدید ترین وسائل کے ذریعے حاصل کردہ علم کو عملی جامہ پہنانے پر زور دیا۔


موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کی وزارت خصوصی پروگرام کی حمایت اور فنڈنگ کے لیے اقوام متحدہ کے ماحولیات کا شکریہ ادا کرتی ہے۔ ورکشاپ کی کامیابی اس میں شامل تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشترکہ کوششوں کا ثبوت ہے۔
یہ ورکشاپ پاکستان میں کچرے کے صوتی انتظام کے طریقوں کو فروغ دینے کے سفر میں ایک اہم سنگ میل کی نشاندہی کرتی ہے۔ موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کی وزارت کیمیائی اور خطرناک فضلہ کے انتظام کے لیے موثر اقدامات کے نفاذ کو مزید آگے بڑھانے کے لیے پرعزم ہے، تاکہ سب کے لیے محفوظ اور زیادہ پائیدار مستقبل کو یقینی بنایا جا سکے۔

50% LikesVS
50% Dislikes
WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com