اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے زیر اہتمام دسویں بین الاقوامی سیرت النبی ﷺکانفرنس کا انِقعاد وہیل چیئر ایشیا کپ: سری لنکن ٹیم کی فتح حکومت کا نیب ترمیمی بل کیس کے فیصلے پر نظرثانی اور اپیل کرنے کا فیصلہ واٹس ایپ کا ایک نیا AI پر مبنی فیچر سامنے آگیا ۔ جناح اسپتال میں 34 سالہ شخص کی پہلی کامیاب روبوٹک سرجری پی ایس او اور پی آئی اے کے درمیان اہم مذاکراتی پیش رفت۔ تحریِک انصاف کی اہم شخصیات سیاست چھوڑ گئ- قومی بچت کا سرٹیفکیٹ CDNS کا ٹاسک مکمل ۔ سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر ایکٹ کے خلاف دائر درخواستوں پر آج سماعت ہو گی ۔ نائیجیریا ایک بے قابو خناق کی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ انڈونیشیا میں پہلی ’بلٹ ٹرین‘ نے سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر اعظم نے لیفٹیننٹ جنرل منیرافسر کوبطورچیئرمین نادرا تقرر کرنے منظوری دے دی  ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں وزارت داخلہ کے قریب خودکش حملہ- سونے کی قیمت میں 36 ہزار روپے تک گر گئی۔ دنیا کے لیے بد صورت ترین مگر اپنے وقت کے بہترین کردار ضیاء محی الدین کی پہلی برسی "کپاس کی کاشت میں انقلابی تبدیلی وزیراعظم نے انتخابی نتائج میں تاخیر کے الزامات مسترد کر دیے بلوچستان کے علاقے پشین، قلعہ سیف اللہ میں دو بم دھماکے20 افراد جاں بحق جماعت اسلامی نے انتخابات میں دھاندلی کی صورت میں سخت مزاحمت کا انتباہ دے دیا کیا پی ٹی آئی خیبرپختونخوا کا قلعہ برقرار رکھ سکے گی؟ کراچی میں الیکشن کے انتظامات مکمل پی ٹی آئی کا 5 فروری کو نئے انٹرا پارٹی انتخابات کرانے کا اعلان الیکشن کمیشن نے 8 فروری کو عام تعطیل کا اعلان کر دیا

سیاست نہیں حقیقی آزادی کی جنگ لڑرہا ہوں، عمران خان

 یوتھ ویژن نیوز (واصب غوری سے ) چیئرمین پاکستان تحریک انصاف اور سابق وزیراعظم عمران خان نے جہلم میں جلسہ عام سے خطاب کیا ہے۔ جس میں ان کا کہنا تھا کہ ملک کی سیلابی صورتحال ایک امتحان ہے۔ قوم جب تک متحد نہ ہو، اس طرح کے امتحان سے نہیں نمٹ سکتی۔ 

انہوں نے کہا کہ رضاکار اور نوجوان اکٹھے کیے جارہے ہیں جو کہ حکومتوں کی امدادی سرگرمیوں میں مدد کریں گے۔ انہوں نے اعلان کیا کہ پیر کی شام ٹیلی تھون کے ذریعے چندہ اکٹھا کیا جائے گا اور اسے سیلاب متاثرین کی مدد پر خرچ کیا جائے گا۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ ان کی حکومت کے ساڑھے تین سال میں 10 ڈیمز کی تعمیر شروع کی گئی۔ منگلا اور تربیلا کے بعد یہ سب سے بڑے ڈیم تعمیر کیے جارہے ہیں۔ گزشتہ 50 سالوں میں حکومت کرنے والوں نے کبھی بڑے ڈیم بنانے کا کیوں نہیں سوچا۔ ان کی حکومت نے پہلی مرتبہ مستقبل کی منصوبہ بندی کی۔ 

انہوں نے اعلان کیا کہ ان کے خلاف مہم چل رہی ہے کہ اس وقت سیاست نہیں کرنی چاہیے، ضمیر فروش کان کھول کرسن لیں، وہ زیادتی نہیں حقیقی آزادی کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ سیلاب ہو یا جنگ یہ جدوجہد چلتی رہے گی۔ یہ جنگ تب تک جاری رہے گی جب تک کہ اس ملک کو چوروں سے آزادی نہ مل جائے۔ 

انہوں نے دوٹوک پیغام میں کہا کہ نواز شریف، شہباز شریف، مولانا فضل الرحمان اور آصف زرداری سن لیں، سیلاب متاثرین کے لیے بھی جدوجہد کروں گا لیکن انہیں نہیں  چھوڑوں گا۔ 

انہوں نے کہا کہ ملک کی سب سے بڑی سیاسی جماعت کو دیوار سے لگایا جارہا ہے۔ اس وقت ملک کی جمہوریت کو سب سے زیادہ خطرہ ہے۔ یہ مجھے ٹیکنیکل ناک آؤٹ کرنا چاہتے ہیں۔ 

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں

WP Twitter Auto Publish Powered By : XYZScripts.com